BinGhazi Profile picture
14 Sep, 83 tweets, 18 min read
"رفع سیدنا عیسیؑ پر قرآنی دلائل"

معزز قارئین اس سبق میں ہم سیدنا عیسیؑ کے رفع کے بارے میں چند قرآنی دلائل پیش کریں گے۔

سب سے پہلے تو یہ سمجھنا ضروری ہے کہ سیدنا عیسیؑ کو یہود قتل کرنا چاہتے تھے۔اور آج تک یہودی یہی کہتے ہیں کہ ہم نے سیدنا عیسیؑ کو قتل کیا ہے۔
اور اللہ تعالٰی یہود سے سیدنا عیسیؑ کو بچانا چاہتے تھے۔یہود سیدنا عیسیؑ کو مارنے کی تدبیر کررہے تھے۔اور اللہ تعالٰی سیدنا عیسیؑ کو بچانا چاہتے تھے۔اور یہ بات تو کسی کافر سے بھی پوچھ لیں کہ اگر کسی انسان کو ساری دنیا مارنے پر تل جائے اور اس انسان کو اللہ تعالٰی بچانا چاہتے ہوں تو
کون کامیاب ہوگا۔تو یقینا وہ کافر بھی یہی جواب دے گا کہ اللہ تعالٰی کے مقابلے میں ساری دنیا ناکام ہوجائے گی۔اور جس انسان کو اللہ تعالٰی بچانا چاہتے ہیں اس کو ساری دنیا کے انسان بھی مل کر مارنا تو دور کی بات ہے ہاتھ بھی نہیں لگاسکیں گے۔
قرآن مجید کی آیت ہے:

وَ مَکَرُوۡا وَ مَکَرَ اللّٰہُ ؕ وَ اللّٰہُ خَیۡرُ الۡمٰکِرِیۡنَ۔

اور ان کافروں نے (عیسیٰؑ کے خلاف) خفیہ تدبیر کی،اور اللہ نے بھی خفیہ تدبیر کی۔اور اللہ اور سے بہتر تدبیر کرنے والا ہے۔

(سورۃ النساء آیت نمبر 54)
اس آیت میں ذکر ہے کہ یہودی سیدنا عیسیؑ کے خلاف ان کو قتل کرنے کی تدبیر کررہے تھے اور اللہ تعالٰی نے یہود کے خلاف سیدنا عیسیؑ کو بچانے کی تدبیر کی۔

جس وقت یہود سیدنا عیسیؑ کو مارنےکی تدبیر کررہےتھے اس وقت اللہ تعالٰی نے سیدنا عیسیؑ سے 4 وعدے فرمائے جو کہ قرآن مجید میں موجود ہیں۔
اِذۡ قَالَ اللّٰہُ یٰعِیۡسٰۤی اِنِّیۡ مُتَوَفِّیۡکَ وَ رَافِعُکَ اِلَیَّ وَ مُطَہِّرُکَ مِنَ الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡا وَ جَاعِلُ الَّذِیۡنَ اتَّبَعُوۡکَ فَوۡقَ الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡۤا اِلٰی یَوۡمِ الۡقِیٰمَۃِ ۚ ثُمَّ اِلَیَّ مَرۡجِعُکُمۡ فَاَحۡکُمُ بَیۡنَکُمۡ فِیۡمَا کُنۡتُمۡ فِیۡہِ
تَخۡتَلِفُوۡنَ۔

(اس کی تدبیر اس وقت سامنے آئی) جب اللہ نے کہا تھا کہ:اے عیسیٰ میں تمہیں صحیح سالم واپس لے لوں گا،اور تمہیں اپنی طرف اٹھا لوں گا،اور جن لوگوں نے کفر اپنا لیا ہے ان (کی ایذا) سے تمہیں پاک کردوں گا۔اور جن لوگوں نے تمہاری اتباع کی ہے،ان کو قیامت کے دن تک ان لوگوں پر
غالب رکھوں گا جنہوں نے تمہارا انکار کیا ہے۔پھر تم سب کو میرے پاس لوٹ کر آنا ہے،اس وقت میں تمہارے درمیان ان باتوں کا فیصلہ کروں گا جن میں تم اختلاف کرتے تھے۔

اس آیت میں اللہ تعالٰی نے سیدنا عیسیؑ کو یہود سے امن کی تسلی دیتےہوئےان سے 4 وعدے کئے۔

1)آپ کو صحیح سالم واپس لے لوں گا
2)آپ کو صحیح سالم واپس لے کر اپنی طرف اٹھا لوں گا۔
3)آپ کو یہود کی صحبت سے پاک کروں گا۔
4)آپ کے پیروکاروں کو قیامت تک یہود پر غالب رکھوں گا۔

معزز قارئین اب اگلا سوال پیدا ہوتا ہے کہ اللہ تعالٰی نے سیدنا عیسیؑ سے جو یہ 4 وعدے کئے ان کو کب اور کیسے پورا کیا۔
اس کا جواب بھی قرآن مجید میں مذکور ہے۔

وَّ قَوۡلِہِمۡ اِنَّا قَتَلۡنَا الۡمَسِیۡحَ عِیۡسَی ابۡنَ مَرۡیَمَ رَسُوۡلَ اللّٰہِ ۚ وَ مَا قَتَلُوۡہُ وَ مَا صَلَبُوۡہُ وَ لٰکِنۡ شُبِّہَ لَہُمۡ ؕ وَ اِنَّ الَّذِیۡنَ اخۡتَلَفُوۡا فِیۡہِ لَفِیۡ شَکٍّ مِّنۡہُ ؕمَا لَہُمۡ بِہٖ مِنۡ عِلۡمٍ
اِلَّا اتِّبَاعَ الظَّنِّ ۚوَ مَا قَتَلُوۡہُ یَقِیۡنًۢا۔بَلۡ رَّفَعَہُ اللّٰہُ اِلَیۡہِ ؕوَ کَانَ اللّٰہُ عَزِیۡزًا حَکِیۡمًا۔

اور یہ کہا کہ:ہم نے اللہ کے رسول مسیح ابن مریم کو قتل کردیا تھا،حالانکہ نہ انہوں نے عیسیٰ (علیہ السلام) کو قتل کیا تھا،نہ انہیں سولی دے پائے تھے،بلکہ
انہیں اشتباہ ہوگیا تھا۔اور حقیقت یہ ہے کہ جن لوگوں نے اس بارے میں اختلاف کیا ہے وہ اس سلسلے میں شک کا شکار ہیں،انہیں گمان کے پیچھے چلنے کے سوا اس بات کا کوئی علم حاصل نہیں ہے، اور یہ بالکل یقینی بات ہے کہ وہ عیسیٰ (علیہ السلام) کو قتل نہیں کر پائے۔بلکہ اللہ نے انہیں اپنے پاس اٹھا
لیا تھا،اور اللہ بڑا صاحب اقتدار،بڑا حکمت والا ہے۔

(سورۃ النساء آیت نمبر 157، 158)

ان آیات سے پتہ چلا کہ یہود جب سیدنا عیسیؑ کو قتل کرنا چاہتے تھے اس وقت اللہ تعالٰی نے سیدنا عیسیؑ کو آسمان پر اٹھا لیا تھا اور اس طرح سیدنا عیسیؑ سے کئے گئے وعدے پورے ہوگئے۔کہ میں آپ کو صحیح
سالم اپنی طرف لے لوں گا اور یہود کی صحبت سے پاک کروں گا اور آپ کے پیروکاروں کو قیامت تک یہود پر غالب رکھوں گا۔

کیونکہ جب اللہ تعالٰی نے سیدنا عیسیؑ کو آسمان پر اٹھا لیا تو اس سے یہ وعدے پورے ہوگئے۔اور سیدنا عیسیؑ کو اللہ تعالٰی نے جب آسمان پر اٹھا لیا تو اس کے کچھ عرصے بعد
عیسائیوں اس یہودیوں پر غلبہ حاصل ہوگیا۔ جوکہ ابھی تک حاصل ہے۔آج بھی یہود دنیا میں دربدر ہیں۔

"ضروری نوٹ"

مسئلہ رفع و نزول سیدنا عیسیؑ پر یہ بات ہمیشہ یاد رکھنے کے قابل ہے کہ سیدنا عیسیؑ کے آسمان پر اٹھائے جانے اور پھر دوبارہ زمین پر نازل ہونے کے بارے میں مرزا قادیانی سے پہلے
کے کسی ایک مسلمان مفسر میں اختلاف نہیں۔اور یہ بات خود مرزا قادیانی نے بھی تسلیم کی ہے۔

تمام مفسرین اس بات پر متفق ہیں کہ اللہ تعالٰی نے سیدنا عیسیؑ کو آسمان پر اٹھالیا تھا اور وہ قرب قیامت واپس زمین پر تشریف لائیں گے ۔
البتہ مفسرین میں سیدنا عیسیؑ کے آسمان پر اٹھائے جانے کی
کیفیت میں اختلاف پایا جاتا ہے۔

"پہلا قول"

کچھ مفسرین کا خیال ہے کہ پہلے سیدنا عیسیؑ کو نیند دی گئی پھر ان کو نیند کی حالت میں آسمان پر اٹھایا گیا۔

"دوسرا قول"

دوسرا قول یہ ہے کہ سیدنا عیسیؑ کو اسی حالت میں آسمان پر اٹھایا گیا۔
یہاں تک تو ہم نے سیدنا عیسیؑ کے آسمان پر اٹھائے جانے کے دلائل قرآن مجید سے دے دیئے۔ لیکن ممکن ہے کوئی قادیانی کہ دے کہ یہ ساری باتیں ہم نے اپنی طرف سے لکھی ہیں۔ اب آیئے ان آیات کی تفسیر چند ان مفسرین سے دیکھتے ہیں جن مفسرین کی مرزا صاحب نے تعریف کی ہے یا ان کو مجدد بھی تسلیم کیا
ہے۔

1)امام جلال الدین سیوطیؒ

مرزا غلام احمد قادیانی نے امام جلال الدین سیوطیؒ کو نویں صدی کا مجدد تسلیم کیا ہے۔

(عسل مصفی جلد 1 صفحہ 162)

اور مرزا صاحب نے امام جلال الدین سیوطیؒ کی تعریف میں یوں لکھا ہے
"امام سیوطی کا مرتبہ اس قدر بلند تھا کہ انہیں جب ضرورت پیش آتی وہ حضورﷺ کی بالمشافہ زیارت کرکے ان سے حدیث دریافت کرلیا کرتے تھے۔"

(ازالہ اوہام حصہ اول صفحہ 151 مندرجہ روحانی خزائن جلد 3 صفحہ 177)
آیت نمبر 1

"وَ مَکَرُوۡا وَ مَکَرَ اللّٰہُ ؕوَ اللّٰہُ خَیۡرُ الۡمٰکِرِیۡنَ"

امام سیوطیؒ اپنی تفسیر درمنثور میں اس آیت کی تفسیر میں ابن جریر اور سدی کے حوالے سے لکھتے ہیں:

"بنی اسرائیل نے حضرت عیسیؑ اور آپ کے انیس حواریوں کا ایک گھر میں محاصرہ کرلیا۔ حضرت عیسیؑ نے اپنے
ساتھیوں سے فرمایا تم میں سے وہ کون ہے جو میری صورت قبول کرے پھر اسے قتل کر دیا جائے تو اس کے لئے جنت ہے۔ایک آدمی نے اس چیز کو قبول کرلیا۔ حضرت عیسیؑ کو آسمانوں پر اٹھالیا گیا۔
اللہ تعالٰی کے فرمان سے انہوں (یہود) نے مکر کیا اللہ تعالٰی نے بھی خفیہ تدبیر کی۔اور اللہ تعالٰی بہترین
خفیہ تدبیر کرنے والا ہے۔"

(تفسیر درمنثور،تفسیر سورۃ آل عمران آیت نمبر 54)

آیت نمبر 2

اِذۡ قَالَ اللّٰہُ یٰعِیۡسٰۤی اِنِّیۡ مُتَوَفِّیۡکَ وَ رَافِعُکَ اِلَیَّ وَ مُطَہِّرُکَ مِنَ الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡا وَ جَاعِلُ الَّذِیۡنَ اتَّبَعُوۡکَ فَوۡقَ الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡۤا اِلٰی
یَوۡمِ الۡقِیٰمَۃِ ۚ ثُمَّ اِلَیَّ مَرۡجِعُکُمۡ فَاَحۡکُمُ بَیۡنَکُمۡ فِیۡمَا کُنۡتُمۡ فِیۡہِ تَخۡتَلِفُوۡنَ۔

ہماری پیش کردہ دوسری آیت کی تفسیر میں امام سیوطیؒ نے ابن جریر،امام عبدالرزاق اور ابن ابی حاتم کے حوالے سے لکھا ہے کہ انہوں نے حضرت حسن بصریؒ کا یہ قول نقل کیا ہے:
"میں تمہںیں (عیسیؑ) کو زمین سے اٹھانے والا ہوں۔"

آگے مزید لکھتے ہیں:

"امام ابن جریر اور ابن ابی حاتم نے ایک اور سند سے حضرت حسن بصریؒ سے ان الفاظ کی تفسیر میں نقل کیا ہے کہ آپ (عیسیؑ) کو نیند عطا کرنے والا ہوں۔اللہ تعالٰی نے نیند کی حالت میں آپ کو آسمانوں پر اٹھالیا۔حضرت حسنؒ
نے کہا کہ رسول اللہﷺ نے یہودیوں سے فرمایا کہ حضرت عیسیؑ مرے نہیں۔وہ قیامت سے قبل آپ کی طرف لوٹیں گے۔"

اس سے آگے امام سیوطیؒ،ابن جریرؒ اور ابن ابی حاتمؒ کے حوالے سے مزید لکھتے ہیں:

اس کا معنی یہ ہے کہ میں تجھے دنیا سے اٹھانے والا ہوں۔تجھے موت عطا کرنے والا نہیں۔
اس کے آخر میں لکھتے ہیں:

امام ابن منذر نے حضرت حسن بصریؒ سے ان آیات کی یہ تفسیر نقل کی ہے کہ حضرت عیسیؑ اللہ تعالٰی کے ہاں اٹھا لئے گئے ہیں۔ قیامت کے روز سے پہلے انہیں دوبارہ زمین پر اتارا جائے گا۔جنہوں نے حضرت عیسیؑ اور حضورﷺ کی تصدیق کی اور جو ان کے دین پر ہے۔وہ ہمیشہ قیامت
تک ان لوگوں پر غالب رہیں گے۔جو ان سے الگ راہ اختیار کریں گے۔

(تفسیر درمنثور،تفسیر سورۃ آل عمران آیت نمبر 55)

آیت نمبر 3

وَّ قَوۡلِہِمۡ اِنَّا قَتَلۡنَا الۡمَسِیۡحَ عِیۡسَی ابۡنَ مَرۡیَمَ رَسُوۡلَ اللّٰہِ ۚ وَ مَا قَتَلُوۡہُ وَ مَا صَلَبُوۡہُ وَ لٰکِنۡ شُبِّہَ لَہُمۡ ؕ
وَ اِنَّ الَّذِیۡنَ اخۡتَلَفُوۡا فِیۡہِ لَفِیۡ شَکٍّ مِّنۡہُ ؕ مَا لَہُمۡ بِہٖ مِنۡ عِلۡمٍ اِلَّا اتِّبَاعَ الظَّنِّ۔وَ مَا قَتَلُوۡہُ یَقِیۡنًۢا۔بَلۡ رَّفَعَہُ اللّٰہُ اِلَیۡہِ ؕوَ کَانَ اللّٰہُ عَزِیۡزًا حَکِیۡمًا۔

ہماری پیش کردہ تیسری آیت کی تفسیر میں امام جلال الدین سیوطیؒ،
امام عبد بن حمیدؒ،ابن جریرؒ اور ابن منذرؒ کے حوالے سے لکھتے ہیں۔کہ انہوں نے حضرت قتادہؒ کا یہ قول نقل کیا ہے:

"جنہوں نے یہ کہا کہ ہم نے حضرت عیسیؑ کو قتل کیا وہ اللہ تعالٰی کے دشمنی یہودی ہیں۔جنہوں نے حضرت عیسیؑ کے قتل پر فخر کیا اور گمان کیا کہ انہوں نے حضرت عیسیؑ کو قتل کیا
ہے۔اور سولی پر لٹکایا ہے۔ہمارے سامنے یہ بھی ذکر کیا گیا ہے کہ آپ نے اپنے ساتھیوں سے فرمایا کہ تم میں سے وہ شخص کون ہے جس پر میری شبیہ ڈالی جائے کیونکہ وہ مقتول ہے۔تو آپ کے ایک ساتھی نے کہا اے اللہ کے نبی میں حاضر ہوں۔ وہ آدمی قتل کر دیا گیا۔اللہ تعالٰی نے اپنے نبی کو محفوظ رکھا
اور اسے آسمانوں کی طرف اٹھا لیا۔"

اسی آیت کی تفسیر میں امام جلال الدین سیوطیؒ، ابن جریرؒ ،امام عبد بن حمیدؒ اور ابن منذرؒ کے حوالے سے لکھتے ہیں کہ انہوں نے حضرت مجاہدؒ سے "شبہ لھم" کی یہ تفسیر نقل کی ہے:

"یہودیوں نے ایسے آدمی کو قتل کیا جو حضرت عیسیؑ تو نہ تھے مگر
وہ حضرت عیسیؑ کے مشابہ تھے۔یہودی یہ گمان کرتے تھے کہ حضرت عیسیؑ یہی ہیں۔اللہ تعالٰی نے انہیں زندہ آسمانوں پر اٹھالیا۔"

لیجئے مرزا غلام احمد قادیانی نے جن کو مجدد تسلیم کیا ہے اور جن کی اس قدر تعریف کی ہے ان کا درج ذیل عقیدہ ان کی تفسیر سے ثابت ہوا۔

1)یہود سیدنا عیسیؑ کو مارنا
چاہتے تھے اور اللہ تعالٰی یہود سے سیدنا عیسیؑ کو بچانا چاہتے تھے۔

2)اللہ تعالٰی نے یہود سے سیدنا عیسیؑ کو بچاکر آسمان پر اٹھالیا۔اور سیدنا عیسیؑ کے پیروکاروں کو قیامت تک یہود پر غلبہ عطا فرمادیا۔

2)حافظ ابن کثیرؒ

مرزا غلام احمد قادیانی نے حافظ ابن کثیرؒ کو چھٹی صدی کا
مجدد تسلیم کیا ہے۔

(عسل مصفی جلد 1 صفحہ 162)

اس کے علاوہ مرزا غلام احمد قادیانی نے حافظ ابن کثیرؒ کو ان اکابر ومحققین میں سے تسلیم کیا ہے۔جن کی آنکھوں کو خداتعالیٰ نے نور معرفت عطا کیا تھا۔

(آئینہ کمالات اسلام صفحہ 168 روحانی خزائن جلد 5 صفحہ 168)
آیت نمبر 1

وَ مَکَرُوۡا وَ مَکَرَ اللّٰہُ ؕ وَ اللّٰہُ خَیۡرُ الۡمٰکِرِیۡنَ۔

ہماری پیش کردہ پہلی آیت کی تفسیر میں حافظ ابن کثیرؒ اپنی مشہور تفسیر ابن کثیر میں لکھتے ہیں:

"بنی اسرائیل کے اس ناپاک گروہ کا ذکر ہو رہا ہے جو حضرت عیسیٰؑ کی طرف سے بھرے تھےکوئی یہ شخص لوگوں کو بہکاتا
پھرتا ہے ملک میں بغاوت پھیلا رہا ہے اور رعایا کو بگاڑ رہا ہے،باپ بیٹوں میں فساد برپا کر رہا ہے،بلکہ اپنی خباثت خیانت کذب و جھوٹ (دروغ) میں یہاں تک بڑھ گئے کہ آپ کو زانیہ کا بیٹا کہا اور آپ پر بڑے بڑے بہتان باندھے،یہاں تک کہ بادشاہ بھی دشمن جان بن گیا اور اپنی فوج کو بھیجا تاکہ
تاکہ اسے گرفتار کر کے سخت سزا کے ساتھ پھانسی دے دو،چنانچہ یہاں سے فوج جاتی ہے اور جس گھر میں آپ تھے اسے چاروں طرف سے گھیر لیتی ہے ناکہ بندی کر کے گھر میں گھستی ہے،لیکن اللہ تعالیٰ آپ کو ان مکاروں کے ہاتھ سے صاف بچا لیتا ہے اس گھر کے روزن (روشن دان) سے آپ کو آسمان کی طرف اٹھا لیتا
ہے۔اور آپ کی شباہت ایک اور شخص پر ڈال دی جاتی ہے جو اسی گھر میں تھا،یہ لوگ رات کے اندھیرے میں اس کو عیسیٰؑ سمجھ لیتے ہیں گرفتار کر کے لے جاتے ہیں۔سخت توہین کرتے ہیں اور سر پر کانٹوں کو تاج رکھ کر اسے صلیب پر چڑھا دیتے ہیں، یہی ان کے ساتھ اللہ کا مکر تھا کہ وہ تو اپنے نزدیک یہ
سمجھتے رہے کہ ہم نے اللہ کے نبی کو پھانسی پر لٹکا دیا حالانکہ اللہ تعالیٰ نے اپنے نبی کو تو نجات دے دی تھی،اس بدبختی اور بدنیتی کا ثمرہ انہیں یہ ملا کہ ان کے دل ہمیشہ کے لئے سخت ہوگئے باطل پر اڑ گئے اور دنیا میں ذلیل و خوار ہوگئے اور آخر دنیا تک اس ذلت میں ہی ڈوبے رہے۔اس کا بیان
اس آیت میں ہے کہ اگر انہیں خفیہ تدبیریں کرنی آتی ہیں تو کیا ہم خفیہ تدبیر کرنا نہیں جانتے بلکہ ہم تو ان سے بہتر خفیہ تدبیریں کرنے والے ہیں۔

(تفسیر ابن کثیر،تفسیر درآیت نمبر 54 سورۃ آل عمران)

آیت نمبر 2

اِذۡ قَالَ اللّٰہُ یٰعِیۡسٰۤی اِنِّیۡ مُتَوَفِّیۡکَ وَ رَافِعُکَ اِلَیَّ
وَ مُطَہِّرُکَ مِنَ الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡا وَ جَاعِلُ الَّذِیۡنَ اتَّبَعُوۡکَ فَوۡقَ الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡۤا اِلٰی یَوۡمِ الۡقِیٰمَۃِ ۚ ثُمَّ اِلَیَّ مَرۡجِعُکُمۡ فَاَحۡکُمُ بَیۡنَکُمۡ فِیۡمَا کُنۡتُمۡ فِیۡہِ تَخۡتَلِفُوۡنَ۔

ہماری پیش کردہ دوسری آیت کی تفسیر میں امام ابن کثیرؒ
حضرت حسنؒ کے حوالے سے لکھتے ہیں:

"رسول اللہﷺ نے یہودیوں سے فرمایا کہ حضرت عیسیٰؑ مرے نہیں وہ تمہاری طرف قیامت سے پہلے لوٹنے والے ہیں۔پھرے فرماتا ہے میں تجھے اپنی طرف اٹھا کر کافروں کی گرفت سے آزاد کرنے والا ہوں،اور تیرے تابعداروں کو کافروں پر غالب رکھنے والا ہوں قیامت تک،
چنانچہ ایسا ہی ہوا ، جب اللہ تعالیٰ نے حضرت عیسیٰؑ کو آسمان پر چڑھا لیا تو ان کے بعد ان کے ساتھیوں کے کئی فریق ہوگئے۔"

(تفسیرابن کثیر،تفسیر سورۃ آل عمران آیت نمبر 55)

آیت نمبر 3

وَّ قَوۡلِہِمۡ اِنَّا قَتَلۡنَا الۡمَسِیۡحَ عِیۡسَی ابۡنَ مَرۡیَمَ رَسُوۡلَ اللّٰہِ ۚ
وَ مَا قَتَلُوۡہُ وَ مَاصَلَبُوۡہُ وَ لٰکِنۡ شُبِّہَ لَہُمۡ ؕ وَ اِنَّ الَّذِیۡنَ اخۡتَلَفُوۡا فِیۡہِ لَفِیۡ شَکٍّ مِّنۡہُ ؕمَا لَہُمۡ بِہٖ مِنۡ عِلۡمٍ اِلَّا اتِّبَاعَ الظَّنِّ ۚوَ مَا قَتَلُوۡہُ یَقِیۡنًۢا۔بَلۡ رَّفَعَہُ اللّٰہُ اِلَیۡہِ ؕوَ کَانَ اللّٰہُ عَزِیۡزًا حَکِیۡمًا
ہماری پیش کردہ تیسری آیت کی تفسیر میں ابن کثیرؒ لکھتے ہیں:

"پورا واقعہ یہ ہے کہ جب اللہ تعالیٰ نے حضرت عیسیٰؑ کو نبوت دے کر بھیجا اور آپ کے ہاتھ پر بڑے بڑے معجزے دکھائے مثلاً بچپن کے اندھوں کو بینا کرنا،کوڑھیوں کو اچھا کرنا، مردوں کو زندہ کرنا،مٹی کے پرند بنا کر پھونک مارنا اور
ان کا جاندار ہو کر اڑ جانا وغیرہ تو یہودیوں کو سخت طیش آیا اور مخالفت پر کمر بستہ ہو گئے اور ہر طرح سے ایذاء رسانی شروع کر دی،آپ کی زندگی تنگ کر دی،کسی بستی میں چند دن آرام کرنا بھی آپ کو نصیب نہ ہوا،ساری عمر جنگلوں اور بیابانوں میں اپنی والدہ کے ساتھ سیاحت میں گذاری،پھر بھی
انہیں چین نہ لینے دیا،یہ دمشق کے بادشاہ کے پاس گئے جو ستارہ پرست مشرک شخص تھا (اس مذہب والوں کے ملک کو اس وقت یونان کہا جاتا تھا) یہ بہت روئے پیٹے اور بدشاہ کو حضرت عیسیٰؑ کے خلاف اکسایا اور کہا کہ یہ شخص بڑا مفسد ہے۔لوگوں کو بہکا رہا ہے،روز نئے فتنے کھڑے کرتا ہے،امن میں خلل
ڈالتا ہے۔ لوگوں کو بغاوت پہ اکساتا ہے وغیرہ۔بادشاہ نے اپنے گورنر کو جو بیت المقدس میں تھا،ایک فرمان لکھا کہ وہ حضرت عیسیٰؑ کو گرفتار کر لے اور سولی پر چڑھا کر اس کے سر پر کانٹوں کا تاج رکھ کر لوگوں کو اس دکھ سے نجات دلوائے۔اس نے فرمان شاہی پڑھ کر یہودیوں کے ایک گروہ کو اپنے ساتھ
لے کر اس مکان کا محاصرہ کر لیا جس میں روح اللہؑ تھے،آپ کے ساتھ اس وقت بارہ تیرہ یا زیادہ سے زیادہ ستر آدمی تھے،جمعہ کے دن عصر کے بعد اس نے محاصرہ کیا اور ہفتہ کی رات تک مکان کو گھیرے میں لئے رہا جب حضرت عیسیٰؑ نے یہ محسوس کر لیا کہ اب وہ مکان میں گھس کر آپؑ کو گرفتار کرلیں گے یا
آپ کو خود باہر نکلنا پڑے گا تو آپؑ نے صحابہ سے فرمایا تم میں سے کون اس بات کو پسند کرتا ہے کہ اس پر میری مشابہت ڈال دی جائے یعنی اس کی صورت اللہ مجھ جیسی بنا دے اور وہ ان کے ہاتھوں گرفتار ہو اور مجھے اللہ مخلصی دے؟میں اس کے لئے جنت کا ضامن ہوں۔اس پر ایک نوجوان نے کہا مجھے یہ
منظور ہے لیکن حضرت عیسیٰؑ نے انہیں اس قابل نہ جان کر دوبارہ یہی کہا، تیسری دفعہ بھی کہا مگر ہر مرتبہ صرف یہی تیار ہوئے رضی اللہ تعالیٰ عنہ۔اب آپ نے یہی منظور فرما لیا اور دیکھتے ہی دیکھتے اس کی صورت قدرتاً بدل گئی بالکل یہ معلوم ہونے لگا کہ حضرت عیسیٰؑ یہی ہیں اور چھت کی طرف ایک
روزن نمودار ہو گیا اور حضرت عیسیٰؑ کی اونگھ کی حالت ہو گئی اور اسی طرح وہ آسمان پر اٹھا لئے گئے۔جیسے قرآن کریم میں ہے آیت (اِذْ قَالَ اللّٰهُ يٰعِيْسٰٓى اِنِّىْ مُتَوَفِّيْكَ وَرَافِعُكَ اِلَيَّ وَمُطَهِّرُكَ مِنَ الَّذِيْنَ كَفَرُوْا وَجَاعِلُ الَّذِيْنَ اتَّبَعُوْكَ فَوْقَ
الَّذِيْنَ كَفَرُوْٓا اِلٰى يَوْمِ الْقِيٰمَةِ۔ (3 ۔ آل عمران:55))
یعنی جب اللہ تعالیٰ نے فرمایا اے عیسیٰ میں تم سے مکمل تعاون کرنے والا ہوں اور اپنی طرف اٹھانے والا ہوں۔حضرت روح اللہ کے سوئے ہوئے آسمان پر اٹھائے جانے کے بعد یہ لوگ اس گھر سے باہر نکلے،یہودیوں کی جماعت نے اس بزرگ
صحابی کو جس پر جناب مسیحؑ کی شباہت ڈال دی گئی تھی، عیسیٰؑ سمجھ کر پکڑ لیا اور راتوں رات اسے سولی پر چڑھا کر اس کے سر پر کانٹوں کا تاج رکھ دیا۔اب یہود خوشیاں منانے لگے کہ ہم نے عیسیٰ بن مریمؑ کو قتل کر دیا اور لطف تو یہ ہے کہ عیسائیوں کی کم عقل اور جاہل جماعت نے بھی یہودیوں کی ہاں
میں ہاں ملا دی اور ہاں صرف وہ لوگ جو مسیحؑ کے ساتھ اس مکان میں تھے اور جنہیں یقینی طور پر معلوم تھا کہ مسیحؑ آسمان پر چڑھا لئے گئے اور یہ فلاں شخص ہے جو دھوکے میں ان کی جگہ کام آیا۔"

(تفسیر ابن کثیر،تفسیر سورۃ النساء،آیت نمبر 155)

لیجئے مرزا غلام احمد قادیانی نے جن کو مجدد
تسلیم کیا ہے اور جن کی اس قدر تعریف کی ہے ان کا درج ذیل عقیدہ ان کی تفسیر سے ثابت ہوا۔

1)یہود سیدنا عیسیؑ کو مارنا چاہتے تھے اور اللہ تعالٰی یہود سے سیدنا عیسیؑ کو بچانا چاہتے تھے۔

2)اللہ تعالٰی نے یہود سے سیدنا عیسیؑ کو بچاکر آسمان پر اٹھالیا۔اور سیدنا عیسیؑ کے پیروکاروں کو
قیامت تک یہود پر غلبہ عطا فرمادیا۔

3)"امام ابن جریرؒ"

مرزا غلام احمد قادیانی نے امام ابن جریرؒ کے بارے میں
لکھا ہے:

"ابن جریر رئیس المفسرین ہیں۔"

(آئینہ کمالات اسلام صفحہ 168 مندرجہ روحانی خزائن جلد 5 صفحہ 168)
اس کے علاوہ ایک اور جگہ مرزا غلام احمد قادیانی نے امام ابن جریرؒ کے بارے میں لکھا ہے:

"ابن جریر نہایت معتبر اور آئمہ حدیث میں سے ہے۔"

(چشمہ معرفت صفحہ 251 مندرجہ روحانی خزائن جلد 23 صفحہ 261)
آیت نمبر 1

وَ مَکَرُوۡا وَ مَکَرَ اللّٰہُ ؕ وَ اللّٰہُ خَیۡرُ الۡمٰکِرِیۡنَ۔

ہماری پیش کردہ پہلی آیت کی تفسیر میں امام ابن جریرؒ لکھتے ہیں:

"بنی اسرائیل نے حضرت عیسیؑ اور آپ کے انیس حواریوں کا ایک گھر میں محاصرہ کرلیا۔ حضرت عیسیؑ نے اپنے ساتھیوں سے فرمایا تم میں سے وہ کون ہے
جو میری صورت قبول کرے پھر اسے قتل کر دیا جائے تو اس کے لئے جنت ہے۔ایک آدمی نے اس چیز کو قبول کرلیا۔ حضرت عیسیؑ کو آسمانوں پر اٹھالیا گیا۔
اللہ تعالٰی کے فرمان سے انہوں (یہود) نے مکر کیا اللہ تعالٰی نے بھی خفیہ تدبیر کی۔اور اللہ تعالٰی بہترین خفیہ تدبیر کرنے والا ہے۔"
(تفسیر طبری تفسیر سورۃ آل عمران آیت نمبر 54)

آیت نمبر 2

اِذۡ قَالَ اللّٰہُ یٰعِیۡسٰۤی اِنِّیۡ مُتَوَفِّیۡکَ وَ رَافِعُکَ اِلَیَّ وَ مُطَہِّرُکَ مِنَ الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡا وَ جَاعِلُ الَّذِیۡنَ اتَّبَعُوۡکَ فَوۡقَ الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡۤا اِلٰی یَوۡمِ الۡقِیٰمَۃِ ۚ ثُمَّ اِلَیَّ
مَرۡجِعُکُمۡ فَاَحۡکُمُ بَیۡنَکُمۡ فِیۡمَا کُنۡتُمۡ فِیۡہِ تَخۡتَلِفُوۡنَ۔

ہماری پیش کردہ دوسری آیت کی تفسیر میں امام ابن جریرؒ نے حضرت حسن بصریؒ کا یہ قول نقل کیا ہے:

"میں تمہیں(عیسیؑ) کو زمین سے اٹھانے والا ہوں۔"

آگے حضرت حسن بصریؒ کے حوالے سے مزید لکھتے ہیں:
"حضرت حسن بصریؒ سے ان الفاظ کی تفسیر میں نقل کیا ہے کہ آپ (عیسیؑ) کو نیند عطا کرنے والا ہوں۔اللہ تعالٰی نے نیند کی حالت میں آپ کو آسمانوں پر اٹھالیا۔حضرت حسنؒ نے کہا کہ رسول اللہﷺ نے یہودیوں سے فرمایا کہ حضرت عیسیؑ مرے نہیں۔وہ قیامت سے قبل آپ کی طرف لوٹیں گے۔"
اس سے آگے ابن جریرؒ مزید لکھتے ہیں:

"اس کا معنی یہ ہے کہ میں تجھے دنیا سے اٹھانے والا ہوں۔تجھے موت عطا کرنے والا نہیں۔"

(تفسیر طبری،تفسیر سورۃ آل عمران،آیت نمبر 55)

آیت نمبر 3

وَّ قَوۡلِہِمۡ اِنَّا قَتَلۡنَا الۡمَسِیۡحَ عِیۡسَی ابۡنَ مَرۡیَمَ رَسُوۡلَ اللّٰہِ ۚ
وَ مَا قَتَلُوۡہُ وَ مَا صَلَبُوۡہُ وَ لٰکِنۡ شُبِّہَ لَہُمۡ ؕ وَ اِنَّ الَّذِیۡنَ اخۡتَلَفُوۡا فِیۡہِ لَفِیۡ شَکٍّ مِّنۡہُ ؕ مَا لَہُمۡ بِہٖ مِنۡ عِلۡمٍ اِلَّا اتِّبَاعَ الظَّنِّ ۚ وَ مَا قَتَلُوۡہُ یَقِیۡنًۢا۔بَلۡ رَّفَعَہُ اللّٰہُ اِلَیۡہِ ؕوَ کَانَ اللّٰہُ عَزِیۡزًا
حَکِیۡمًا۔

ہماری پیش کردہ تیسری آیت کی تفسیر میں ابن جریرؒ حضرت قتادہؒ کے حوالے سے لکھتے ہیں:

"جنہوں نے یہ کہا کہ ہم نے حضرت عیسیؑ کو قتل کیا وہ اللہ تعالٰی کے دشمنی یہودی ہیں۔ جنہوں نے حضرت عیسیؑ کے قتل پر فخر کیا اور گمان کیا کہ انہوں نے حضرت عیسیؑ کو قتل کیا ہے۔ اور سولی پر
لٹکایا ہے۔ہمارے سامنے یہ بھی ذکر کیا گیا ہے کہ آپ نے اپنے ساتھیوں سے فرمایا کہ تم میں سے وہ شخص کون ہے جس پر میری شبیہ ڈالی جائے کیونکہ وہ مقتول ہے۔تو آپ کے ایک ساتھی نے کہا اے اللہ کے نبی میں حاضر ہوں۔وہ آدمی قتل کر دیا گیا ۔ اللہ تعالٰی نے اپنے نبی کو محفوظ رکھا اور اسے آسمانوں
کی طرف اٹھا لیا۔"

اسی آیت کی تفسیر میں امام ابن جریرؒ نے حضرت مجاہدؒ سے "شبہ لھم" کی یہ تفسیر نقل کی ہے:

"یہودیوں نے ایسے آدمی کو قتل کیا جو حضرت عیسیؑ تو نہ تھے مگر وہ حضرت عیسیؑ کے مشابہ تھے۔یہودی یہ گمان کرتے تھے کہ حضرت عیسیؑ یہی ہیں۔اللہ تعالٰی نے انہیں زندہ آسمانوں پر
اٹھالیا۔"

(تفسیر طبری تفسیر سورۃ النساء آیت نمبر 155)

لیجئے مرزا غلام احمد قادیانی نے جن مفسر کی اس قدر تعریف کی ہے ان کا درج ذیل عقیدہ ان کی تفسیر سے ثابت ہوا۔

1)یہود سیدنا عیسیؑ کو مارنا چاہتے تھے اور اللہ تعالٰی یہود سے سیدنا عیسیؑ کو بچانا چاہتے تھے۔
2)اللہ تعالٰی نے یہود سے سیدنا عیسیؑ کو بچاکر آسمان پر اٹھالیا ۔ اور سیدنا عیسیؑ کے پیروکاروں کو قیامت تک یہود پر غلبہ عطا فرمادیا۔

4)امام زمحشری

مرزا غلام احمد قادیانی نے امام زمحشری کے بارے میں لکھا ہے:
"زبان عرب کا وہ بے مثل امام جس کے مقابلے میں کسی کو چون چرا کی گنجائش نہیں۔"

(ضمیمہ براہین احمدیہ حصہ پنجم صفحہ 208 مندرجہ روحانی خزائن جلد 21 صفحہ 381)
آیت نمبر 1

وَ مَکَرُوۡا وَ مَکَرَ اللّٰہُ ؕ وَ اللّٰہُ خَیۡرُ الۡمٰکِرِیۡنَ۔

ہماری پیش کردہ پہلی آیت کی تفسیر میں امام زمحشری لکھتے ہیں:

"واو بنی اسرائیل کے کفار کے لئے ہے جن سے کفر کو محسوس کیا گیا اور ان کا مکر یہ تھا کہ انہوں نے لوگوں کو مقرر کیا تھا کہ ان (عیسیؑ) کو دھوکے
سے قتل کریں۔جس وقت اللہ نے عیسیؑ کو اٹھا لیا اور ان عیسیؑ کی شبیہ کو ڈال دیا جنہوں نے دھوکے کا ارادہ کیا تھا حتی کہ اس شبیہ کو قتل کردیا۔یعنی اللہ تدبیر کرنے میں ان سے قوی ہے اور نقصان پہنچانے پر ذیادہ قادر ہے وہاں سے جہاں ان کو پتا بھی نہ چلے۔"
(تفسیر الکشاف سورہ آل عمران آیت نمبر 54)

آیت نمبر 2

ہماری پیش کردہ دوسری آیت کی تفسیر میں امام زمحشری لکھتے ہیں:

"(اذقال اللہ) یہ ظرف ہے خیر الماکرین کے لئے یا لمکر اللہ کے لئے۔
(أنی متوفیک) یعنی عنقریب میں موت دوں گا تیرے مقررہ وقت پر۔اور اسکا معنی ہےکہ میں تجھے کافروں کے
قتل سےبچا لوں گا اور تیری موت کو اس وقت تک موخر کروں گا جو میں نے لکھ رکھی ہے۔اور تجھے تیری طبعی موت دوں گا.نا کہ ان کافروں کے ہاتھوں۔
(ورافعک الی)یعنی آسمان کی طرف جو کہ فرشتوں کا ٹھکانہ ہے۔
(ومطھرک من الذين کفروا) یعنی ان کی بری صحبت سے بچا لوں گا اور کہا گیا کہ میں تجھ کو زمین
سے اٹھا لوں گا۔فلاں سے مال کے لینے کی طرح جب تو اس سے پورا وصول کر لے۔اور یہ بھی کہا گیا کہ میں تجھے موت دوں گا تیرے وقت پر آسمان سے نازل ہونے کے بعد اور ابھی اوپر اٹھاتا ہوں۔اور اٹھاوں گا تجھے نیند میں۔
(جیسا کہ یہ قول ہے اور وہ جو تمہیں تمہاری نیند میں موت نہیں دیتا) (القرآن )
تو تب بیدار ہوگا اس وقت آسمان میں امن کے ساتھ اور مقرب ہوگا۔
(فوق الذین کفروا الی یوم القیامہ) یعنی وہ دلیل کے زریعے غالب ہوں گے اور اکثر احوال میں تلوار کے زریعے سے۔اور اس کےپیروکار ہی مسلمان ہیں اس لئےکہ انہوں نے اصل اسلام میں اس کی اتباع کی۔"
(تفسیر الکشاف،سورہ آل عمران آیت نمبر 55)

آیت نمبر 3

"وَّ قَوۡلِہِمۡ اِنَّا قَتَلۡنَا الۡمَسِیۡحَ عِیۡسَی ابۡنَ مَرۡیَمَ رَسُوۡلَ اللّٰہِ ۚ وَ مَا قَتَلُوۡہُ وَ مَا صَلَبُوۡہُ وَ لٰکِنۡ شُبِّہَ لَہُمۡ ؕ وَ اِنَّ الَّذِیۡنَ اخۡتَلَفُوۡا فِیۡہِ لَفِیۡ شَکٍّ مِّنۡہُ ؕ مَا لَہُمۡ
بِہٖ مِنۡ عِلۡمٍ اِلَّا اتِّبَاعَ الظَّنِّ ۚ وَ مَا قَتَلُوۡہُ یَقِیۡنًۢا۔بَلۡ رَّفَعَہُ اللّٰہُ اِلَیۡہِ ؕ وَ کَانَ اللّٰہُ عَزِیۡزًا حَکِیۡمًا۔"

امام زمحشری ہماری پیش کردہ تیسری آیت کی تفسیر میں لکھتے ہیں:

"یہود ان (سیدنا عیسیؑ) کو قتل کرنے کے لئے جمع ہوگئے۔پس اللہ تعالٰی
نے ان کی خبر اس طرح لی کہ ان کو آسمان پر اٹھا لیا۔اور ان (عیسیؑ)کو یہود کی صحبت سے پاک کردیا۔"

(تفسیر الکشاف، سورة النساء آیت نمبر 157،158)

لیجئے مرزا غلام احمد قادیانی نے جن کی اس قدر تعریف کی ہے ان کا درج ذیل عقیدہ ان کی تفسیر سے ثابت ہوا۔

1)یہود سیدنا عیسیؑ کو مارنا چاہتے
تھے اور اللہ تعالٰی یہود سے سیدنا عیسیؑ کو بچانا چاہتے تھے۔

2)اللہ تعالٰی نے یہود سے سیدنا عیسیؑ کو بچاکر آسمان پر اٹھالیا۔اور سیدنا عیسیؑ کے پیروکاروں کو قیامت تک یہود پر غلبہ عطا فرمادیا۔

"خلاصہ کلام"

ساری گفتگو کا خلاصہ یہ ہے کہ قرآن مجید کی آیات سے اور مرزا غلام احمد
قادیانی کے تسلیم کردہ مجددین اور تعریف کئے گئے مفسرین کی تفسیر سے ثابت ہوا کہ اللہ تعالٰی نے سیدنا عیسیؑ کو زندہ آسمان پر اٹھا لیا تھا۔

(سیدنا عیسیؑ کے قرب قیامت دوبارہ زمین پر نزول کے قرآنی دلائل اگلے سبق میں بیان کئے جائیں گے انشاء اللہ)

• • •

Missing some Tweet in this thread? You can try to force a refresh
 

Keep Current with BinGhazi

BinGhazi Profile picture

Stay in touch and get notified when new unrolls are available from this author!

Read all threads

This Thread may be Removed Anytime!

PDF

Twitter may remove this content at anytime! Save it as PDF for later use!

Try unrolling a thread yourself!

how to unroll video
  1. Follow @ThreadReaderApp to mention us!

  2. From a Twitter thread mention us with a keyword "unroll"
@threadreaderapp unroll

Practice here first or read more on our help page!

More from @BinteGhazi18

16 Sep
"رفع و نزول سیدنا عیسیؑ پر 10 احادیث مبارکہ"

سیدنا عیسیؑ کا آسمان کی طرف اٹھایا جانا اور پھر ان کا قرب قیامت آسمان سے زمین کی طرف نازل ہونا قرآن مجید اور 100 سے زائد احادیث مبارکہ سے ثابت ہے۔
اس سبق میں ہم نزول سیدنا عیسیؑ کے متعلق چند احادیث مبارکہ کا جائزہ لیتے ہیں۔
حدیث نمبر 1

عَنْ أَبی هُرَيْرَةَ ؓ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِﷺ:كَيْفَ أَنْتُمْ إِذَا نَزَلَ ابْنُ مَرْيَمَ فِيكُمْ وَإِمَامُكُمْ مِنْكُمْ۔

حضرت ابو ہریرة ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہﷺ نے فرمایا:
"تمہارا اس وقت کیا حال ہو گا جب (عیسیٰؑ)ابن مریم تم
میں اتریں گے (تم نماز پڑھ رہے ہو گے) اور تمہارا امام تم ہی میں سے ہو گا۔"

(بخاری حدیث نمبر 3449 ٬ باب نزول عیسی بن مریمؑ)

حدیث نمبر 2

عَنْ أَبی هُرَيْرَةَ ؓ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِﷺ: "وَالَّذِي نَفْسِي بِيَدِهِ لَيُوشِكَنَّ أَنْ يَنْزِلَ
Read 84 tweets
15 Sep
"نزول سیدنا عیسیؑ پر قرآنی دلائل"

پچھلے سبق میں ہم نے سیدنا عیسیؑ کے آسمان پر اٹھائے جانے کے قرآنی دلائل پیش کئے تھے اور جن مفسرین کی مرزاقادیانی نے تعریف کی ہوئی ہے ان کے تفسیری حوالہ جات بھی لکھے تھے۔

اس سبق میں ہم سیدنا عیسیؑ کے دوبارہ نزول پر قرآنی دلائل کا جائزہ لیں گے۔
اللہ تعالٰی نے قرآن مجید میں سیدنا عیسیؑ کو قیامت کی نشانیوں میں سے بتایا ہے۔یعنی جب سیدنا عیسیؑ کا دوبارہ آسمان سے نزول ہوگا اس کے بعد قیامت نزدیک ہوگی۔جیسا کہ مندرجہ ذیل آیت میں اللہ تعالٰی نے فرمایا ہے کہ
"وَ اِنَّہٗ لَعِلۡمٌ لِّلسَّاعَۃِ فَلَا تَمۡتَرُنَّ بِہَا وَ اتَّبِعُوۡنِ ؕ ہٰذَا صِرَاطٌ مُّسۡتَقِیۡمٌ"

اور یقین رکھو کہ وہ (یعنی عیسیٰؑ) قیامت کی ایک نشانی ہیں۔اس لئے تم اس میں شک نہ کرو،اور میری بات مانو،یہی سیدھا راستہ ہے۔

(سورۃ الزخرف آیت نمبر 61)
Read 53 tweets
13 Sep
"مسئلہ رفع و نزول سیدنا عیسیؑ پر چند ابتدائی گزارشات"

سیدنا عیسیؑ کے رفع و نزول کے عقیدے کے بارے میں 4 گروہ ہیں۔

1)مسلمان
2)عیسائی
3)یہودی
4)قادیانی

ان چاروں گروہوں کے عقائد سیدنا عیسیؑ کے بارے میں درج ذیل ہیں۔
"مسلمانوں کا عقیدہ"

مسلمان کہتے ہیں کہ یہودی سیدنا عیسیؑ کو نہ ہی قتل کرسکے اور نہ ہی صلیب دے سکے بلکہ اللہ تعالٰی نے سیدنا عیسیؑ کو آسمان پر اٹھا لیا۔اور وہ قرب قیامت واپس زمین پر تشریف لائیں گے۔

مسلمانوں کا عقیدہ قرآن پاک سے اور احادیث مبارکہ سے ثابت ہے۔
رفع و نزول سیدنا عیسیؑ کے قرآنی دلائل و احادیث مبارکہ انشاء اللہ اگلے اسباق میں آئیں گے )

"یہودیوں کا عقیدہ"

یہودیوں کا عقیدہ یہ ہے کہ انہوں نے سیدنا عیسیؑ کو صلیب دے کر قتل کر دیا تھا۔

جیسا کہ قرآن مجید میں ذکر ہے۔
Read 39 tweets
11 Sep
"رفع و نزول سیدنا عیسیؑ پر چند ابتدائی گزارشات"

"رفع نزول سیدنا عیسیؑ کا عقیدہ اور حضرت محمدﷺ کا فرض منصبی"

حضور سرور کائناتﷺ کی بعثت کے وقت سر زمین عرب میں تین طبقے خصوصیت سے موجود تھے۔

1)مشرکین مکہ
2)نصاریٰ نجران
3)یہود

اب ہمیں دیکھنا ہے کہ قرآن مجید کی رو سے آپﷺ کی
رسالت کے کیا فرائض تھے؟

1)آپﷺ کی بعثت سے قبل کے جو طریق منہاج ابراہیمی کے موافق تھے ان میں تغیر و تبدل نہ ہوا تھا۔ان کو آپﷺ نے اور زیادہ استحکام کے ساتھ قائم فرمایا اور جن امور میں تحریف فساد یا شعائر شرک و کفر مل گئے تھے انکا آپﷺ نے بڑی شدت سے علی الا علان رد فرمایا۔
جن امور کا تعلق عبادات و اعمال سے تها انکے آداب و رسومات اور مکروہات کو واضح کیا۔ رسومات فاسدہ کی بیخ کنی فرمائی اور طریقے صالحہ کا عمل فرمایا اور جس مسئلہ شریعت کو پہلی امتوں نے چهوڑ رکھا تها یا انبیاء سابقہ نے اسے مکمل نہ کیا تها انکو آپﷺ نے تروتازگی دے کر رائج فرمایا اور
Read 88 tweets
10 Sep
"مسئلہ رفع و نزول سیدنا عیسیؑ پر چند ابتدائی گزارشات"

"مسلمانوں کا عقیدہ"

مسلمانوں کا اجماعی عقیدہ یہ ہے کہ سیدنا عیسیؑ علیہ السلام کو یہود نہ قتل کر سکے اور نہ صلیب دے سکے۔بلکہ اللہ تعالٰی نے ان کو آسمان پر اٹھا لیا اور اب وہ قرب قیامت واپس زمین پر تشریف لائیں گے۔ہمارا عقیدہ
قرآن، حدیث،اجماع اور تواتر سے ثابت ہے۔

"قادیانیوں کا عقیدہ"

قادیانیوں کا عقیدہ یہ ہے کہ یہود نے سیدنا عیسیؑ کو صلیب پر چڑھایا اور چند گھنٹے وہ صلیب پر رہے۔لیکن وہ صلیب پر چڑھنے کی وجہ سے قتل نہیں ہوسکے۔بلکہ زخمی ہوگئے۔
تین گھنٹے کے بعد آپؑ کو صلیب سے زخمی حالت میں اتارا گیا
پھر آپؑ کو ایک غار میں لے جایا گیا وہاں آپؑ کی مرہم پٹی کی گئی۔پھر آپؑ صحت یاب ہوگئے۔اس کےبعد سیدنا عیسیؑ اپنی والدہ حضرت مریمؑ کو ساتھ لے کر فلسطین سے افغانستان کے راستے سے کشمیر چلے گئے۔کشمیر میں 87 برس زندہ رہے۔پھر سیدنا عیسیؑ کی وفات ہوئی۔اور کشمیر کے محلہ خان یار میں ان کی
Read 41 tweets
30 Aug
آیت خاتم النبیین کی علمی تحقیقی تفسیر"*

قرآن مجید میں اللہ تعالٰی فرماتے ہیں۔

*مَا کَانَ مُحَمَّدٌ اَبَاۤ اَحَدٍ مِّنۡ رِّجَالِکُمۡ وَ لٰکِنۡ رَّسُوۡلَ اللّٰہِ وَ خَاتَمَ النَّبِیّٖنَ ؕ وَ کَانَ اللّٰہُ بِکُلِّ شَیۡءٍ عَلِیۡمًا ۔*
محمدﷺ تم مردوں میں سے کسی کے باپ نہیں ہیں
لیکن وہ اللہ کے رسول ہیں،اور تمام نبیوں میں سب سے آخری نبی ہیں،اور اللہ ہر بات کو خوب جاننے والا ہے۔

*(سورۃ الاحزاب آیت نمبر 40)*
"آیت کا شان نزول"*

عرب معاشرے میں یہ قبیح رسم موجود تھی کہ وہ لےپالک بیٹے کو حقیقی بیٹا سمجھتے تھے اور اس لےپالک کو تمام احوال و احکام میں بھی حقیقی بیٹا ہی سمجھتے تھے اور مرنے کے بعد وراثت،حلت و حرمت،رشتہ،ناطہ وغیرہ تمام احکام میں بھی حقیقی بیٹا ہی تصور کرتے تھے۔
Read 86 tweets

Did Thread Reader help you today?

Support us! We are indie developers!


This site is made by just two indie developers on a laptop doing marketing, support and development! Read more about the story.

Become a Premium Member ($3/month or $30/year) and get exclusive features!

Become Premium

Too expensive? Make a small donation by buying us coffee ($5) or help with server cost ($10)

Donate via Paypal Become our Patreon

Thank you for your support!

Follow Us on Twitter!