"ویل للعرب، مِن شرقد اقرتب"

مشرق وسطی کی سیاست میں ایک اہم موڑ اپریل 2015 میں اُس وقت آیا جب سعودی فرمانروا شاہ سلمان نے اپنی جانشینی کی قطار میں نئی نسل کو شامل کیا۔۔۔
محمد بن نائف جو 23جنوری 2015ء کوڈپٹی ولی عہد کے عہدے پرمتمکن ہوا، وہ امریکی تعلیمی ادارے لیوس اینڈ کلارک++
کالج سے پڑھا اور اس نے ایف بی آئی اورسکاٹ لینڈ یارڈ سے بھی دہشت گردی کے سلسلے میں خصوصی مہارتیں حاصل کی۔۔۔۔۔ 29 اپریل 2015ء کواسے ولی عہد بنا دیا گیا اورشہزادہ مقرن بن عبدالعزیزکوہٹا دیا گیا. محمد بن نائف سعودی عرب کا وزیرِ داخلہ اورخفیہ ایجنسی کا سربراہ تھا. سی آئی اے نے اسکی++
کارکردگی کے اعتراف میں اسکو خصوصی میڈل سے نوازا۔۔۔۔امریکہ کا برسرِعام اس کواپنا آدمی قراردیتا تھا۔۔۔۔ لیکن پھر جون 2017ء میں اسے یکدم برطرف کردیا گیا اورمحمد بن سلمان سعودی اقتدار حاصل کرنے میں کامیاب ہوگیا ۔۔۔۔۔۔
محمد بن سلمان کو امریکہ کا منظور نظر بننے کے لیئے محمد بن نائف++
سے بڑی پیشکش کرنی تھی، الجزیرہ سے تعلق رکھنے والا مشہور صحافی جمال اشائل لکھتا ہے کہ محمد بن سلمان نے عادل الجبیر کے ذریعے جو پلان امریکہ کو دیا تھا اس میں اسرائیل کو تسلیم کرنے کی آفر شامل تھی اور اسی آفر کی بناء پر محمد بن نائف کو کھڈے لائن لگانا قبول کرلیا گیا
کہنےکا مقصد یہ++
کہ جو کچھ آج ہورہا ہے یہ کوئی ایک دو دن کا کھیل نہیں اسکے پیچھے کئی سالوں کی پلاننگ ہے۔۔۔۔ عرب بادشاہ اپنا اقتدار بحال رکھنے کے لیئے امریکہ کے محتاج ہیں اور امریکہ پہ اسرائیل کی مکمل اجارہ داری ہے۔۔۔ کیسی مضحکہ خیز بات ہے کہ ایک جانب جو بائیڈن اور کمالا حارث زور و شور سے++
اسرائیلی مفادات کا تحفظ یقینی بنانے کی یقین دہانیاں کرتے پھر رہے جبکہ دوسری جانب ٹرمپ اس موقع پر "امن معاہدے" کروا کے پوائنٹ اسکورنگ کر رہا ہے اور امریکی یہ سوال پوچھتے نظر آتے ہیں کہ بھئی ہمارا کیا لینا دینا ہے مشرق وسطی سے
انہیں کوئی نہیں بتاتا کہ اسرائیلی مفادات کا تحفظ++
امریکہ کا نصب العین ہے کہ درپردہ امریکہ کی ڈوریں زائنونسٹس کے ہاتھوں میں ہیں۔۔۔
گریٹر اسرائیل کا قیام ہی زائونسٹ ایجنڈے کی تکمیل ہے اور اس میں تیزی سے پیشرفت ہوتی نظر آتی ہے۔۔۔
بحرین ایک چھوٹا سا ملک ہے جو دنیا کے نقشے پر نظر بھی نہیں آتا، آپ اس سے اندازہ لگائیں کہ لاہور کا++
کل رقبہ 1,772 km² اور آبادی تقریبا" ڈیڑھ کروڑ بتائی جاتی ہے جبکہ بحرین کا کل رقبہ 765.3 km² اور آبادی پندرہ لاکھ نفوس پر مشتمل ہے۔۔۔۔ سیاسی لحاظ سے بحرین سعودی عرب کا دست نگر ہے اور سوائے تیل کے اس ملک کے پاس اپنا کچھ بھی نہیں ہے
تو پھر ایسا کیا تھا کہ ڈونلڈ ٹرمپ نے باقاعدہ طور++
پر خود اعلان کر کے بحرین اور اسرائیل کے درمیان "امن معاہدے"
کو historic breakthrough قرار دیا۔۔۔ کیا بحرین کی اسرائیل کے ساتھ کوئی جنگ چل رہی تھی؟؟؟
یہ چھوٹا سا ملک مشرق وسطی کی سیاست میں اہمیت کا حامل اس لیئے ہے کہ ستر فیصد آبادی اہل تشیع پر مشتمل ہے جبکہ شاہی خاندان سنی++
مکتبہ فکر سے تعلق رکھتا ہے اسلیئے وہاں ایرانی اثر ورسوخ عوام پر زیادہ ہے گو کہ حمد بن عیسی عوام کو خوش کرنے کے لیئے کافی رعایتیں دیتے ہیں لیکن پھر بھی مخالف قوتیں سر اٹھاتی رہتی ہیں۔۔۔
اب جبکہ بحرین نے اسرائیل کو تسلیم کیا ہے تو عوام کی طرف سے منفی ردعمل سامنے آرہا ہے۔۔۔۔
حکومت کے خلاف نفرت بڑھ رہی ہے
ایسے میں ذرا سی چنگاری آگ بھڑکانے کے لیئے کافی ہوگی
اور پھر ایک اور عرب اسپرنگ کبھی بھی لائی جاسکتی ہے۔۔۔
بے شک عرب کے لیے تباہی ہے، اس فتنے سے جو بہت نزدیک آ چکا ہے!!

• • •

Missing some Tweet in this thread? You can try to force a refresh
 

Keep Current with السیدة المسلمة

السیدة المسلمة Profile picture

Stay in touch and get notified when new unrolls are available from this author!

Read all threads

This Thread may be Removed Anytime!

PDF

Twitter may remove this content at anytime! Save it as PDF for later use!

Try unrolling a thread yourself!

how to unroll video
  1. Follow @ThreadReaderApp to mention us!

  2. From a Twitter thread mention us with a keyword "unroll"
@threadreaderapp unroll

Practice here first or read more on our help page!

More from @SyedaSays__

29 Sep
آرمینیا اور آذربائیجان کے درمیان تنازع ہے کیا؟

آرمینیا اور آذربائیجان کے درمیان تنازع کا محور ناگورنو قرہباخ نامی علاقہ ہے۔ اس علاقے کو آذربائیجان کا حصہ تسلیم کیا جاتا ہے لیکن اس کا انتظام آرمینیائی نسل کے لوگوں کے پاس ہے
دونوں ممالک کے درمیان اس علاقے کو حاصل کرنے کے لیے 80👇 Image
اور 90 کی دہائی میں خونریز جنگیں ہو چکی ہیں۔
دونوں ممالک جنگ بندی پر تو اتفاق کرلیتے ہیں لیکن کسی امن معاہدے تک نہیں پہنچ سکے۔
آرمینیا اور آذربائیجان سنہ 1922 سے 1991 تک قائم رہنے والے کمیونسٹ ملک سویت یونین کا حصہ تھے۔ دونوں ممالک جنوب مشرقی یورپ میں ہیں جو دفاعی لحاظ سے اہم👇
خطہ ہے اور جو ’قفقاز‘ کہلاتا ہے۔ ان ممالک کی سرحدیں مغرب میں ترکی، جنوب میں ایران اور شمال میں جارجیا سے ملتی ہیں۔ جبکہ روس کی سرحد شمال میں آذربائیجان سے ملتی ہے۔
آرمینیا میں آبادی کی اکثریت مسیحی ہے جبکہ تیل کی دولت سے مالا مال ملک آذربائیجان میں اکثریت مسلمانوں کی ہے👇
Read 9 tweets
25 Sep
تقریر کیسے بدلے گی تقدیر!!

گاؤں میں جب دو لوگوں میں جھگڑا ہوجائے تو معاملہ برداری کے بڑوں کے پاس لے جایا جاتا ہے تاکہ مل بیٹھ کر مسئلے کا حل نکال لیا جائے۔ پنچایت/جرگہ منعقد کیا جاتا ہے اور پھر فریقین فیصلے کو ماننے کے پابند ہوتے ہیں
ستر سال سے زائد عرصہ👇
#PMImranKhanAtUNGA
گزرا کشمیر کے معاملے پر دونوں ملکوں نے صرف سیاست کی، پاکستان نے کبھی کوئی بات چیت کی کوشش کی بھی تو بھارت کی طرف سے اس کوشش کو ملیامیٹ کیا جاتا رہا۔۔۔ جب فوج اتاری تو بیرونی دباؤ اور کمزور قیادت کے پیش نظر فوج کو واپس بلانا پڑ گیا اور مسئلہ جوں کا توں رہا۔۔۔
عالمی برادری کبھی 👇
کشمیر کے معاملے پر سنجیدہ نہیں ہوئی کیونکہ یہ واحد مسئلہ ہے پاکستان اور بھارت کے بیچ، جو اگر حل ہوگیا تو دونوں ملکوں کے تعلقات نارمل ہوجائیں گے اور راوی چین ہی چین لکھنے لگے گا
پھر ان گاڈ فادرز سے اسلحہ کون خریدے گا؟
امریکہ، روس اور چین کبھی نہیں چاہیں گے کہ مسئلہ کشمیر حل ہو👇
Read 6 tweets
24 Sep
آپ آئسکریم نہیں دھوکا کھا رہے ہیں!!

جیسا کہ نام سے ظاہر ہے کہ آئسکریم میں ڈیری فیٹ یعنی کریم جسے ہم بالائی بھی کہتے ہیں، اسکا ہونا لازم ہے۔۔۔
لیکن آپ کو یہ جان کر حیرت ہوگی کہ مشہور آئسکریم برانڈز آپکو ڈیری فیٹ کے بجائے مضر صحت ویجٹیبل فیٹ سے بنے فروزن ڈیزرٹ کھلا رہے ہیں ++ ImageImage
وہ تو بھلا ہو یمی آئسکریم والوں کا کہ جنہوں نے عدالت میں کیس کیا تو معزز عدلیہ نے والز کمپنی کو فروزن ڈیزرٹ لکھنے کا پابند کیا، یمی آئسکریم واحد برانڈ ہے جو دودھ ملائی سے بنی آئسکریم فروخت کرتے ہیں۔۔۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ بہت سے لوگوں کو اسکا فرق معلوم بھی نہیں یے++ Image
آئسکریم صحت کے لیئے مفید ہے لیکن فروزن ڈیزرٹ جو کہ مکمل طور پر کیمیکلز اور آرٹیفشل فلیورز سے تیار شدہ ہوتے ہیں، کئی بیماریوں کا موجب بنتے ہیں جن میں ذیابیطس اور دل کی بیماریاں سرفہرست ہیں جبکہ یہ بچوں کی ذہنی استعداد پر بھی اثرانداز ہوتے ہیں
دنیا بھر میں والز کمپنی فروزن ڈیزرٹ++ Image
Read 6 tweets
23 Sep
دہشت کی علامت عثمانی تھپڑ!!

عثمانی تھپڑ جسے Osmanli Tokadi کہتے ہیں، ایک قسم کی تکنیک ہےجسے عثمانی ترک جنگوں میں استعمال کرتے تھے ویسے تو یہ تکینک سلطنت عثمانیہ قائم ہونے سے پہلے بھی ترکوں میں استعمال ہوتی تھی مگر عثمانیوں نے اس میں چند تبدیلیاں کر کے اسے ایک جارہانہ وار++ Image
میں بدل دیا جو کہ جنگوں میں بہت کام آتا تھا، اس تھپڑ کا بنیادی مقصد اپنے دشمن کو بنا ہتھیار استعمال کیے جارہانہ انداز استعمال کرتے ہوئے حملہ کرنا ہوتا تھا، عثمانی سپاہی جب لڑائی کے دوران ہتھیاروں کے بغیر ہو جاتے تو عثمانی تھپڑ سے ہی کام لیتے جس سے دشمن کا دماغ وقتی طور پر سُن++
ہو جاتا ہے
عثمانی تھپڑ ہاتھ کے دونوں طرف سے لگایا جاسکتا ہے اور یہ تھپڑ مارتے ہوئے بازو کو کہنی سے نہیں موڑا جاتا، اور کندھے تک بازو کو سیدھا رکھ کر مارا جاتا یے تاکہ مارتے وقت پوری طاقت استعمال ہو،
اور اس وجہ سے آواز بھی بہت زور دارپیدا ہوتی جس سے دشمن کچھ دیر کے لیے ڈر جاتا++
Read 13 tweets
22 Sep
اپنے دشمن پہچانو۔۔۔!!!

کسی نے مجھ سے پوچھا کہ ہمیں کیوں لگتا ہے کہ پاکستان کے خلاف ہی سب سازشیں کرتے ہیں؟ دنیا کے اور ملک اتنے ترقی یافتہ ہیں وہاں یہ سب کیوں نہیں ہوتا۔۔۔۔ ایک نسبتا" پسماندہ و مقروض ملک جو آج تک اپنے پیروں پہ کھڑا ہی نا ہوسکا، عالمی طاقتوں کے لیئے اتنی اہمیت++
کا حامل کیوں ہے؟
اسکا جواب تو بہت طویل ہوتا مگر ایک ہی جملے میں سما گیا۔۔۔۔
پاکستان کا مطلب کیا لا الہ الا اللہ
پاکستان دنیا کا واحد ملک ہے جو اسلام کے نام پر بنا، اس سے قبل دنیا کی تاریخ میں ایسی مثال نا تھی کہ کوئی ریاست مذھبی نظریئے پہ قائم کی گئی ہو مگر بعد میں اسرائیل بھی++
مذھب کے نام پر قائم ہوا۔۔۔ مطلب آج بھی دنیا میں صرف دو ممالک ہیں جہاں مذھب نظریاتی اساس ہے
یہی وجہ ہے کہ قیام سے آج تک پاکستان سازشوں کی زد میں رہا۔۔۔۔ نا اہل لوگ مسلط کیئے گئے جو ذاتی مفاد کو ملکی مفاد پہ مقدم رکھتے تھے
تعلیمی نظام میں پرائیویٹ اسکولز بطور سلیپر سیلز داخل کیئے++
Read 23 tweets
21 Sep
پاکستانی انجینئرز نے دماغ کی ہدایات پر چلنے والا مصنوعی بازو تیار کر لیا۔۔۔۔۔

انس اور اویس نامی انجینئرز کا بنایا گیا یہ مصنوعی بازو اب تک تیس سے زائد لوگوں کا دستِ بازو بن چکا ہے۔ انجینئرز نے مصنوعی بازو کے سنسر کو ان جگہوں پہ لگایا ہے جن پہ دماغ ہاتھ کو کنٹرول کرنے والے سگنل++
بھیجتا ہے۔ یہ منصوعی بازو 3 لاکھ بارہ ہزار سات روپے کی لاگت سے بنایا گیا ہے۔ جو کہ پٹھوں کو دماغ سے ملنے والے پیغامات کو مشینی زبان میں بدل کر انگلیوں اور بازو کی حرکت کو ممکن بناتا ہے۔ سو مریض کو اصلی والے بازو کا احساس ہوتا ہے۔

انجینئرز کے مطابق انہوں نے یہ بازو آئرن مین ++
کے کردار سے متاثر ہو کر بنایا ہے۔ جبکہ وہ مزید ایسے جسمانی بائیونک حصے بنانے کا ارادہ رکھتے ہیں تاکہ معذور لوگ معذور نا رہیں۔۔۔۔
جبکہ پاکستان میں انہوں نے یہ مصنوعی بازو پہلی مرتبہ ایک پانچ سالہ بچے میں ٹرانسپلانٹ کیا ہے۔ جو کہ ایک اعزاز کی بات ہے++
Read 4 tweets

Did Thread Reader help you today?

Support us! We are indie developers!


This site is made by just two indie developers on a laptop doing marketing, support and development! Read more about the story.

Become a Premium Member ($3/month or $30/year) and get exclusive features!

Become Premium

Too expensive? Make a small donation by buying us coffee ($5) or help with server cost ($10)

Donate via Paypal Become our Patreon

Thank you for your support!

Follow Us on Twitter!