سچی کہانی؛
نام اور کیریکٹر فرضی ہیں۔ کسی شخص سے ممثلت محض اتفاقہ ہے جسکا ادارہ ذمہ دار نہیں
#چورنی
ماسی مریم گھر سے چوری کرکےنکلی ہی تو گھر والوں نےپکڑ لیا
پوٹلی سے گھر کا سامان برآمد ہوا
اس سے پہلےکچھ کہتے اس نے وہ تقریر کی کہ سبکی آنکھوں میں اتھرو آگئے
"اے دنیا والو میں نے چوری اسلیئے کی کہ میرا باپ چوری میں پکڑا گیا تو ظالم تھانیدار نے جیل میں بند کیا
بڑی مشکل سے جھوٹی بیماری کے کاغذ اور رشوت دیکر چھوٹا
اب دربدر کی ٹھوکریں کھا رھا"
میری امی مری تو میں نے اس ظالم دنیا سے ہاتھ جوڑ کر اسکی جگہ NA 123 نوکری پر رکھنے کو کہا مگر وہ نہ مانے۔ پھر دادی بھی مرگئی مگر غربت کی وجہ سے میرے ٹوٹ بٹوٹ جیسے بھائی ، ببلو ڈبلو جنازے پر نا آ سکے۔
محلے کی مسجد کے مولانا ساب کی آنکھوں میں آنسو آ گئے انہوں نے کہا ، صحیح کہہ رھی مریم، انکے والد بہت نیک تھے، میرا بھی وظیفہ لگایا ہوا تھا۔
مسجد کے جنیریٹر میں متواتر ڈیزل ڈلواتے تھے۔
مدرسے کے بچوں کو غل غپاڑے پر لے جاتے اور پیٹ بھر کر کھانا بھی کھلاتے تھے
نہیں نہیں ! ماسی کو سزا ہونی چاہیئے، عادل ساب نے عینک ٹھیک کرتے ہوئے کہا
یہ ہمارے گھر بھی کام کرتی نجانے کیا کیا چرایا ہوگا؟

عادل ساب، خدا کا خوف کریں ماسی مریم نے آنسو پونچھتے ہوئے کہا، یہ دیکھیں کہہ کر پوٹلی جھاڑی تو ایک ویڈیو لڑھک کر نیچے جا گری
عادل ساب نے لپک کر اٹھائ اور چلا کر بولے چورنی یہ کیا ہے؛

مائ مریم نے محلے کےلوگوں کو مخاطب کرتے ہوئے اطمینان سے کہا
عادل ساب کی شادی کی ویڈیو !

باجی نے دی تھی کہ اور کاپیاں کروا دو

عادل ساب روہانسے ہو کر پیچھے ہٹے
چوکیدار پکڑ لو مائ کو ، لالہ جان آگے بڑھا ہی تھا کہ حاجی ساب بولے ارے بھئ عورت ذات ہے پولیس کو بلوا کر اسکے حوالے کرو
ہاہا ! بلوا لو، بلوا لو، مائ نے قہقہہ لگایا؛

ڈرتے ہیں بندوق والے ایک نہتی ماسی سے
اسکو اس گھر میں رکھوایا کس نے تھا؟
چوکیدار نے پوچھا
باجی پازیب نے فوراً جواب دیا
اسکے پاس قطری خط تھا ویرفیکشن کے لیئے اسلئے رکھا تھا
مڑا ! چوکیدار نے ہاتھ ماتھے پر مارتے ہوئے کہا
قطری خط تو جعلی اوتا، یہ تو گھروں میں چوری کرنے والے گینگ جاسم پٹواری سے بنوا لیتے پیسے دیکر
ام تو کہتا اسکو جیل بھیجو
بھیجو بھیجو جیل،میں نہیں ڈرتی جیل سے
مطلب عادی مجرم ہے،کسی نےلقمہ دیا
بھیجو جیل اسےمحلے والوں نے یک زبان ہوکر کہنا شروع کیا
تو لوگوں کےبگڑتے تیور دیکھ کر ماسی مریم گڑگڑانے پر آگئ
جیل میں مجھ پر ظلم ہوتے
باتھ روم میں کیمرہ لگادیتے
چوھوں کا بچا کھانا دیتے
عادل بولا،یار چورنی تو کیا ھوا؟
ہمارے مولک میں عورت کا احترام،اسکو جیل نا بھیجو!
بالکل صحیح فرمایا،ڈاکٹرمقدس ملک بولے؛
مانا،ماسی مریم چورنی مگر کون چور نہیں اس زمانے میں؟
اگر اسکو سزا دینی تو پہلے انکو سزا دیں جنہوں نے چینی چوری کی، آئ ایم ایف سے قرضہ لیا
جی جی، پرھیز شدید نے ہاں میں ہاں ملائ
یہاں یہ بتانا ضروری ہے کہ مریم ماسی ادھیڑ عمر کی پرکشش عورت تھی
افواہ تھی کہ ڈاکٹر مقدس اور ماسی میں لپٹ جھپٹ چل رہی تھی
کئ بار ماسی انکے کلینک سے دن ڈھلتے نکلتے دیکھی گئ تھی
پرھیز شدید کہنے کو تو انکل ہیں مگر ناڑے کے ڈھیلے بتائے جاتے
یہ ماسی کے ساتھ گھومتے بھی دیکھے گئے کئ دفعہ
اتنے لوگوں کی گواھی سے ماسی مریم کو تسلی سی ہوئ اور اس نے کنکھارا بھر کر کہا
میں کمزور ہوں اسلیئے مجھ پر الزام لگ رھے
آج آر پار ہوگا
غریب ہوں، مظلوم ہوں،
بے گھر ہوں !
میرا اس محلے میں تو کیا؟ کہیں بھی ایک گھر بھی نکل آئے تو تو
پریس کے صحافی سلیم جھاڑن نے بڑھ کر مریم ماسی کے آنسو پونچھنے کے لیئے ہاتھ بڑھایا ہی تھا کہ ماسی نے قہر آلود نگاہوں سے گھورا اور کہا
اوقات میں رہ ٹچے
چناچہ
وہ رومال پکڑا کر با ادب کھڑا ......
پڑوسن مسز شیرازی بولی؛

عورت کا احترام کرنا چاہیئے، مریم ماسی کو کچھ نا کہو
غلطی کس سے نہیں ہوتی۔ انسان خطا کا پتلا ھے
میں خود ایک دفعہ غلطی سے بطور رشوت سرکاری حج پر چلی گئ تھی
بعد میں مطیع اللہ جان نے بتایا تو پتہ چلا کی سفارشی حج حرام ہے
مجھے دکھ ھوا مگر شرمندگی نہیں مجھے کوئ
کیونکہ
اللہ کی مرضی نا ہوتی تو مجھے نا بلاتا

ماسی مریم کی چوری میں بھی کوئ اللہ کا راز ہے

اللہ نہ چاھتا تو یہ چوری نا کرتی!
مولانا نےڈاڑھی کھجائ
تائید میں سر ہلاتےسوچا
پوائنٹ اچا مسز شیرازی کا
میری بے نامی زمین کا یہی جواب نیب کیلئے
صحافی میر بولا؛
"چھوڑ دیں اسے ورنہ جب یہ جیل سے نکلے گی تو اور بھی خطرناک ہوگی"
ایک شیطانی مسکراھٹ،ماسی مریم،مسزشیرازی،میر،کے چہرے پر پھیل گئ
#چور_کی_داڑھی_میں_تنکا
رانا ساب جو ایک شریف ملنسار بزرگ محلے کے، انہوں نے آگے بڑھ کر ماسی مریم کو بغور اوپر سے نیچے تک دیکھا، زبان ہونٹوں پر پھیری اور بولے؛ ملب یہ کے بھئ، غلطی سے بھی سامان آ سکتا سامان کبھی پوٹلی میں۔۔۔
ملب یہ کہ دیکھیں نا وہ نشئ تاجی کوکر نے مجھے ایک دفعہ لفٹ دی اپنی کار میں
میں 500کلو ھیروئین کےساتھ پھڑا گیا مگر اسکا ملب یہ تو نئ کہ وہ میری ہے
سب نے حیرانی سے رانا کی طرف دیکھا تو انہوں نےمونچھ کو تاؤ دیکر ماسی مریم کیطرف دیکھا اور مسکرائے،بالکل یہی کلیہ ماسی مریم پر بھی لگتا
اچانک ہیجڑا پارٹی محلے میں وارد ہو ئ جسکے آگے آگےبلو رانی گرو ناچ رھا تھی!
آئےہائے!کیا ہو رھا یہاں؟
اس نے تالی پیٹتے ہوئے کہا
گرو!ماسی مریم پھڑی گئ چوری اچ،حنا ہیجڑے نےاٹھلا کرکہا
ہائےہائے!لگتی وی چورنی اے پر ہمارے لیئے اچھا،نوٹنکی لگائ ہوئ اسنےلوگ جمع لگ جاؤ کام پر اور پیسے پکڑو
سب ھجڑوں نے جھوم جھوم کر گانا شروع کیا
چلے تیر چلے ہلے
لگے دشمناں نو ہلے
شازیہ کھسرے نے پاؤٹ ہونٹ سے ہلے ہلے بلے بلے
زندہ ہے بھٹو زندہ پر ناچ شروع کیا تو شیری کھسری سے بھی نا رھا گیا اور خوب ٹھمکے لگائے
اوباش نوجوانوں نے خوب شاباشی دی اور شیلا کھسرے نے گھنگھرو توڑ ڈالے
دوگڑوی والیاں،آزما شہزادی،مائ جا گجرنی بھی اس ھجوم میں شامل ہوکر جسٹس ببرکا سانگ گانےلگیں؛
محلے کے بےروزگار تھڑئیے اوباش،ذیشان،راحیل،مودے،مغل کو موقع مل گیا
انہوں نےنعرے لگانے شروع کیئے
مریم جیوے جیوے
ان لفنگوں،ہیجڑوں کی ہلڑ بازی میں ایسا ماحول بن گیا جیسے پی ڈی ایم کا جلسہ ہو
اسی اثناء میں پولیس کی گاڑی گلی میں داخل ہوئی اور اسمیں سے اعظم ساب باھر نکلے
اعظم ساب اس جگہ سے ووٹ لیکر بھاری اکثریت سے کامیاب ہوئے تھے
ساتھ ایس ایچ او شیخو بابا بھی تھا جس نے مجمع دیکھ کر چیخ کر کہا؛ اوئے کیا ہو رھا یہاں؟
ماسی مریم ، اعظم ساب کو دیکھ کر سٹپٹا گئ
اعظم ساب نے لوگوں سے ماجرا پوچھ کر تھانیدار سے کہا
آپکو پتہ میں کسی کی سفارش نہیں کرتا
قانون مطابق کاروائی کریں
ماسی مریم نے جب دیکھا کہ بات بگڑ کر تھانے کچہری تک جا پہنچی تو چیختے ہوئے بولی
ہم نہیں مانتے سلیکٹڈ اعظم کو
یہ نالائق ہے

نیازی کو کون جانتا
گو نیازی گو
بزدل اعظم
ہماری بدنصیبی

ہسپتال کے پیسے کھا گیا

اس کو کون جانتا؟

اس نے کیا، کیا؟👇
ابتک حنا کھسرا لمس گروپ ماسی کے قریب پہنچ چکا تھا
یہ دیکھ کرکہ تھانیدار شو بندکرنےلگا ویل ملنے سے پہلے تو احتجاج شروع کیا
کہنے لگی؛ماسی مریم سلیکٹڈ کےگھر کام کرتی
سلیکٹڈ کی بیوی کالا جادو کرتی
اچانک کسی چلبلے نےنعرہ لگا دیا
#Lums_ka_Khusra
پھرکیا سینے سے کپڑا ہٹا اور سینہ کوبی
بلو رانی نے ساتھ دیا، ہاں سچ کہہ رھا حنا باجی،
"یہ تو کتھ پتلی ہے"
مگر اسی وقت بلو نے شیخو کو اپنی طرف آتا دیکھا تو چپکے سے مریم ماسی کی اوٹ کھڑی پازیب گڈوی والی سے بولی؛ شیخو کی نیت مجھ پر خراب، میں چلی اور یہ جا وہ جا!
شیخو نے ماسی مریم کو دبوچا تو وہ بولی
شیخو ووٹ کو عزت دو
اتنا ظلم کرو جتنا تم سہہ سکتے
اللہ کا خوف کرو
مجھے جانے دے شیخو
شیخو نے مسکرا کر کہا
پہلے سوچنا تھا نا؟
ایکپریس ٹرین نیور ویٹ فار پسنجر
پکڑی گئ نا آخر؟
میں نہ کہتا تھا
ایوری ڈے اس ناٹ سنڈے
ماسی بولی؛
توبہ توبہ !
مریم ماسی نے بالاخر ہتھیا ڈال دیئے
ہاتھ آگے بڑھائے
اور پوچھا
بس ایک بات بتا دو؟
مجھے کیوں نکالا؟
اس سے پہلے شیخو کچھ کہتا
اعظم ساب بولے؛
کیونکہ
سارا ٹبر چور ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
@threadreaderapp "unroll"

• • •

Missing some Tweet in this thread? You can try to force a refresh
 

Keep Current with Doctor Hoori Khan : No DM

Doctor Hoori Khan : No DM Profile picture

Stay in touch and get notified when new unrolls are available from this author!

Read all threads

This Thread may be Removed Anytime!

PDF

Twitter may remove this content at anytime! Save it as PDF for later use!

Try unrolling a thread yourself!

how to unroll video
  1. Follow @ThreadReaderApp to mention us!

  2. From a Twitter thread mention us with a keyword "unroll"
@threadreaderapp unroll

Practice here first or read more on our help page!

Did Thread Reader help you today?

Support us! We are indie developers!


This site is made by just two indie developers on a laptop doing marketing, support and development! Read more about the story.

Become a Premium Member ($3/month or $30/year) and get exclusive features!

Become Premium

Too expensive? Make a small donation by buying us coffee ($5) or help with server cost ($10)

Donate via Paypal Become our Patreon

Thank you for your support!

Follow Us on Twitter!