علـــمـــی دنیــــــا Profile picture
‏‏‏‏‏‏مختصر معلوماتی اسلامی اور تاریخی اردو تحریریں. فیس بک گروپ جوائن کریں 👈 https://t.co/s3OgEwDAj2 دوسرا اکاؤنٹ 👈 @AliBhattiTP
Laraib Asghar Profile picture 1 added to My Authors
26 Feb
ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﺣﻀﺮﺕ ﺍﺑﻮﺑﮑﺮ ﺻﺪﯾﻖ ﺭﺿﯽ ﷲ ﻋﻨﮧُ اور ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﷲ ﻋﻨﮧ ﮐﯽ ﻣﻼﻗﺎﺕ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﺣﻀﺮﺕ ﺍﺑﻮﺑﮑﺮ ﺻﺪﯾﻖ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠّٰﻪ ﻋﻨﮧُ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠّٰﻪ ﻋﻨﮧُ Image
ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻣُﺴﮑﺮﺍﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﷲ ﻋﻨﮧُ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ :
ﺁﭖ ﮐﯿﻮﮞ ﻣُﺴﮑﺮﺍ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ؟
ﺣﻀﺮﺕ ﺍﺑﻮﺑﮑﺮ ﺻﺪﯾﻖ ﺭﺿﯽ ﷲ ﻋﻨﮧُ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ :
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠّٰﻪ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠّٰﻪ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺁﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﻮ ﯾﮧ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﺳُﻨﺎ ﮐﮧ ﭘُﻞ ﺻﺮﺍﻁ ﭘﺮ ﺳﮯ ﺻﺮﻑ ﻭﮨﯽ ﮔُﺰﺭﮮ ﮔﺎ ﺟﺲ ﮐﻮ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠّٰﻪ ﻋﻨﮧُ ﺗﺤﺮﯾﺮﯼ ﺍِﺟﺎﺯﺕ ﻧﺎﻣﮧ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ۔
Read 6 tweets
24 Feb
اپنی بیٹی سے میری شادی کر دو

جُلیبیب رضی اللہ عنہ ایک انصاری صحابی تھے، نہ مالدار تھے، نہ کسی معروف خاندان سے تعلق تھا۔صاحبِ منصب بھی نہ تھے۔ رشتہ داروں کی تعداد بھی زیادہ نہ تھی۔ رنگ بھی سانولا تھا۔ لیکن اللہ کے رسول ﷺ کی محبت سے سرشار تھے۔بھوک کی حالت میں پھٹے
پرانے کپڑے پہنے اللہ کے رسول کی خدمت میں حاضر ہوتے، علم سیکھتے اور صحبت سے فیض یاب ہوتے۔
ایک دن اللہ کے رسول ﷺ نے شفقت کی نظر سے دیکھا اور ارشاد فرمایا:۔ "جلیبیب! تم شادی نہیں کرو گے"۔
جلیبیب رضی اللہ عنہُ نے عرض کیا: اللہ کے رسول! مجھ جیسے آدمی سے بھلا کون شادی کرے گا؟
اللہ کے رسول ﷺ نے پھر فرمایا" تم شادی نہیں کرو گے"۔ اور وہ جواباً عرض گزار ہوئے کہ اللہ کے رسول ﷺ! بھلا مجھ سے کون شادی کرے گا؟ نہ مال نہ جاہ و جلال!!۔
اللہ کے رسول ﷺ نے تیسری مرتبہ بھی ارشاد فرمایا : "جلیبیب ! تم شادی نہیں کرو گے؟"۔
جواب میں انہوں نے پھر وہی کہا: اللہ کے
Read 18 tweets
24 Feb
یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم! قیامت کب آئے گی؟ ''
حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نماز کے لیے اُٹھ کھڑے ہوئے،نماز سے فارغ ہو کر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: قیامت کے متعلق پوچھنے والا کہاں ہے؟ ''
اس شخص نے عرض کِیا:
'' یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم!
میں حاضر ہوں۔ ''
آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:
'' تم نے قیامت کے لیے کیا تیاری کی ہے؟ ''
اس نے عرض کِیا:
'' یارسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم! نہ تو میں نے بہت زیادہ نمازیں پڑھی ہیں اور نہ ہی بے شمار روزے رکھے ہیں مگر اِتنی بات ضرور ہے کہ میں اللہ اور اس کے رسول
صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے محبّت رکھتا ہوں۔ ''
آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے یہ سُن کر فرمایا:
'' ( قیامت کے دن ) انسان اس کے ساتھ ہو گا جس سے وہ محبّت کرتا ہے اور تیرا حشر بھی اسی کے ساتھ ہو گا جس کے ساتھ تجھے محبّت ہے۔ ''
راوی کہتے ہیں کہ:
''
Read 6 tweets
23 Feb
ایک دن حضرت ابوہریرہ رضی اللّہ عنہُ حضور نبی کریم صلی اللّہ علیہ وآلہ واصحابہ وسلم کی زیارت کے لیے حاضر ہوئے تو آپ صلی اللّہ علیہ وآلہ واصحابہ وسلم کو مسجد میں نہ پا کر بے تاب ہو گئے اور شوقِ دِید میں نِکلے دریافت کِیا تو کسی نے پہاڑ کی طرف اِشارہ کِیا وہاں گئے تو چرواہا بکریاں
چَرا رہا تھا اس سے پوچھا کہ میرے آقا صلی اللّہ علیہ وآلہ واصحابہ وسلم کو کہیں دیکھا ہے؟ اس چرواہے نے کہا میں تیرے آقا کریم صلی اللہ علیہ وآلہ واصحابہ وسلم کو تو نہیں جانتا اِتنا جانتا ہوں کہ اس غار میں تین دن رات سے کوئی اس قدر درد و سوز سے سجدے میں گریہ و زاری کر رہا ہے کہ میری
بکریوں نے ہی نہیں بلکہ تمام چرِند و پرِند نے کھانا پینا ہی چھوڑا ہُوا ہے حضرت ابوہریرہ رضی اللّہ عنہُ نے فرمایا کچھ جانتا ہے کیا الفاظ بول رہا ہے؟ تو چرواہے نے کہا
می کند با گریہ ہر ساعتی نالہء یااُمّتی یااُمّتی
ہر گھڑی یااُمّتی یااُمّتی کی پُکار کر رہا ہے
Read 5 tweets
23 Feb
مریخ پر زندگی ہوسکتی ہے یا نہیں؟

مریخ پر میکرو لیول کی زندگی کے شواہد نہیں ملتے اور شاید اگر کبھی ملیں گے تو وہ یا تو فاسلز کی صورت میں یا پھر شاید نہ ہی ملیں... اگر سیارہ مریخ پر میکرو لیول کی زندگی ہوتی تو اس کا ثبوت کافی عرصہ پہلے ہی مل جاتا...
خیر اسی سوال کا دوسرا اہم
جز یہ ہے کہ اگر مریخ پر زندگی ہے تو شاید وہ مائیکرو لیول کی زندگی ہے... یعنی کہ چھوٹے بیکٹیریاز، وائرسز کی صورت میں ہوسکتا ہے کہ وہاں پر زندگی موجود ہے... لیکن اس کی بھی صورتیں ہیں پہلی تو یہ کہ اگر کسی زمانہ میں مریخ کی سطح پر پانی بہتا رہا تھا تو پھر ایسا کیا ہوا کہ اس
کا سارا پانی دونوں پولز پر جمع ہوکر برف بن گیا؟
اگر کبھی مریخ کی سطح پر پانی بہتا رہا ہے تو وہاں پر کم از کم پودوں کے فاسلز تو موجود ہونے چاہیئے... جبکہ فلحال کسی بھی قسم کا کوئی ثبوت نہیں ملا... لیکن عین ممکن ہے کہ عنقریب کچھ چونکا دینے والے شواہد انسان کو ضرور ملیں...
Read 10 tweets
23 Feb
پانی پت کی تیسری جنگ : احمد شاہ ابدالی

اورنگ زیب کی وفات مغل حکومت کے زوال کا نقطہء آغاز تھا جو ہندوستان کی سیاسی بد امنی معاشی ومعاشرتی بد حالی اور اخلاقی ومذہبی بدنظمی کا آغاز ثابت ہوا-اورنگ زیب کی وفات کے بعد دس سال کے عرصے میں وراثت تخت کے بارے میں سات بار لڑائی
ہوئی جس سے زوال کی رفتار اور تیز ہو گئی-شہزادوں کی آپسی خانہ جنگی سے موقع پاکر مرہٹوں نے اپنی اس فوجی قوت وطاقت کو جمع کرنا شروع کردیا جس طاقت کا اورنگ زیب قلع قمع کرچکے تھے شہزادوں کی ناعاقبت اندیشی سے مرہٹوں کو سنبھلنے کا موقع مل گیا- شہزادوں اور ان کے
بعد والے بادشاہوں کی غفلت کی وجہ سے مغل حکومت کے خلاف تین دشمن طاقتیں تیار ہو چکی تھیں:
1 مرہٹے
- 2 سکھ
- 3 جاٹ
یہ تینوں آزاد طاقتیں موقع بموقع دلی (دہلی) اور اس کے اطراف میں لوٹ مار کرتے رہتے تھے-
مرہٹوں نے 1741 سے 1751 تک بنگال اور بہار میں 4 لاکھ سے زیادہ لوگوں کی قتل
Read 17 tweets
20 Feb
ڈھائی ہزار برس قدیم الیکٹرک بیٹری

بغداد کے قریب ڈھائی ہزار سال پرانی تہذیب کے کھنڈرات سے الیکٹرک بیٹری کی دریافت ہوئی۔ یہ بیڑی دراصل پیلے رنگ کی مٹی سے بنے 6 انچ لمبے ایک گلدان کی صورت میں تھی۔ یہ گلدان 1933ء میں بغداد کے قریب جنوب مشرق میں خوجت رابہ Khujut Rabu کے ImageImageImage
مقام سے کھدائی کے دوران ایک بڑی تعداد میں برآمد ہوئے،جنہیں آثارقدیمہ کے ماہرنے اسے عام گلدان سمجھ کر بغداد میوزیم میں رکھ دیا۔

1936ء میں بغداد میں ہی آثارِ قدیمہ کے جرمن ماہر انجینیر ولہیم کونِگ Wilhelm Konig نے جب اس کا بغور مطالعہ کیا تو معلوم ہوا کہ یہ کوئی
عام گلدان نہیں بلکہ الیکٹرک بیڑی ہے، جس میں 60 فیصد قلعی کا آمیزہ Asphalt کی تہہ کے ساتھ تانبے کا سلنڈر بھی موجود تھا جس پر تیزاب کی ملمع کاری کی گئی تھی اور ایک لوہے کی سلاخ گزار کر تانبے کے سلنڈر میں پہنچائی گئی تھی۔ ولہیم کونِگ نے اسے بغداد بیٹری کا نام دیا
بعد میں ولہیم کونِگ
Read 21 tweets
20 Feb
پاکدامنی کا بدلہ پاکدامنی

تفسیر روح البیان میں ایک قصہ منقول ہے کہ شہر بخارا میں ایک سنہار کی مشہور دکان تھی اس کی بیوی خوبصورت اور نیک سیرت تھی ایک سقاء( پانی لانے والا)اس کے گھر تیس سال تک پانی لاتا رہا بہت بااعتماد شخص تھا ایک دن اسی سقاء نے پانی ڈالنے کے بعد
اس سنہار کی بیوی کا ہاتھ پکڑ کر شہوت سے دبایا اور چلاگیا عورت بہت غمزدہ ہوئی کہ اتنی مدت کے اعتماد کو ٹھیس پہنچی اس کی آنکھوں سے آنسو بہنے لگے اسی دوران سنہار کهانا کهانے کے لئے گھر آیا تو اس نے بیوی کو روتے ہوئے دیکھا پوچھنے پر صورتحال کی خبر ہوئی تو
سنہار کی آنکھوں میں آنسو آگئے۔ بیوی نے پوچھا کیا ہوا سنہار نے بتایا کہ آج ایک عورت زیور خریدنے آئی جب میں اسے زیور دینے لگا تو اس کا خوبصورت ہاتھ مجھے پسند آیا میں نے اس اجنبیہ کے ہاتھ کو شہوت کے ساتھ دبایا یہ میرے اوپر قرض ہو گیا تها لہٰذا سقاء نے تمہارے ہاتھ کو
Read 5 tweets
19 Feb
کچھ مسلم حکمران تاریخ کے آسمان پر ہمیشہ جگمگاتے رہیں گے‘ شیر شاہ سوری ان میں سے ایک ہے۔ شیر شاہ ایک نڈر‘ عالی طرف اور مردم شناس مسلم بادشاہ تھا‘ رعایا پروری‘ عدل و انصاف‘ مساوات اور حسنِ سلوک کی جس نے شاندار مثالیں قائم کیں اور ایسے عظیم کارنامے انجام دیے جنہیں
یاد کر کے آج بھی رشک آتا ہے۔ شیر شاہ سوری نے رعایا کی سہولت کے لیے بہت سے رفاہی کام کروائے ۔ سولہویں صدی میں جب شیر شاہ سوری نے ہندوستان میں اپنی حکومت قائم کی تو اس کی ترجیحات میں 2500 کلومیٹر طویل قدیم سڑک جی ٹی روڈ کی تعمیرِ نو تھی جو کابل سے کلکتہ
تک پھیلی ہوئی تھی تاکہ سرکاری پیغام رسانی اور تجارت کو مؤثر اور تیز تر بنایا جائے۔ اس سڑک کے بارے میں روایت ہے کہ اس کا پہلے نام جرنیلی سڑک تھا جو انگریزوں کے دورِ حکمرانی میں بدل کر جی ٹی روڈ یعنی گرینڈ ٹرنک روڈ رکھا گیا۔ سینکڑوں سال قدیم اس سڑک کا گزر کابل
Read 8 tweets
19 Feb
یہی چراغ جلیں گے تو روشنی ہو گی۔۔۔

پہلی تصویر میں نظر آنے والی لڑکی پاکستانی طالبہ زارا نعیم ڈار ہے جس نے ACCA امتحان میں دنیا میں سب سے زیادہ نمبر حاصل کرکے ریکارڈ توڑ دیا ہے۔ لاہور سے تعلق رکھنے والی پاکستان کی یہ قابل فخر بیٹی Financial Reporting میں سب سے زیادہ
نمبر حاصل کر کے گوگل پرائز ونر بن چکی ہیں ۔

دوسری تصویر چترال سے تعلق رکھنے والی ڈاکٹر زبیدہ سرانگ کی ہے۔ وہ ایک اپتھالمالوجسٹ ہیں ۔ یعنی وہ آنکھوں کی بیماریوں ، آنکھوں کے مسائل اور ان کے علاج کے متعلق اسپیشلسٹ ہیں ۔ انہوں نے اس موضوع پہ ایک کتاب بھی لکھی ہے
جس کا نام ہے
"Optics Made Easy"
اس کتاب کو اس وقت کو
Best Ophthalmology books of All the time
قرار دیا گیا ہے ۔ یعنی آنکھوں کے متعلق دنیا کی سب سے بہترین کتاب بن چکی ہے۔ یہ یقیناً انسانیت کےلیے بڑا تحفہ ہے۔ اس نے پاکستان کا نام دنیا بھر میں روشن کیا ہے ۔
Read 4 tweets
18 Feb
روضہ رسولﷺ کی جاروب کے پروں کو اپنا تاج بنانے والے عثمانی سلاطین!

سلطنت عثمانیہ نے سات سو سال تک صرف کسی ایک ملک پر حکومت نہیں کی بلکہ کئ ملکوں اور براعظموں پر ان کی شہنشاہی تھی۔ درجنوں بادشاہ ان کے زیر نگیں تھے۔یہ بادشاہوں کے بادشاہ تھے۔ لیکن یہ شہنشاہ خود کیا تھے؟ Image
مشرق سے مغرب اور شمال سے جنوب تک حکمرانی کرنے والے یہ شہنشاہ خود کو اللہ اور رسولﷺ کا ادنیٰ غلام سمجھتے تھے۔ ان کے نزدیک اللہ اور رسولﷺ کی اطاعت اور فرمانبرداری دولت، شہرت، طاقت، سیاست، قومیت، پر مقدم تھی۔
ایک دور تھا کہ جب مسجدِ نبوی میں حجرہ رسول ﷺ
کی صفائ کے لئے مور اور شُتر مرغ کے پنکھوں سے بنی جھاڑو استعمال کی جاتی تھی۔ کچھ عرصہ استعمال کے بعد ان پروں کی جھاڑو سے پر نکال کر عثمانی حکمرانوں کے پاس بھجوایا جاتا جن کو وہ فرطِ عقیدت سے اپنی آنکھوں سے لگاتے، ان کو چومتے اور اپنی پگڑیوں اور تاجوں میں لگانا اعزاز اور
Read 17 tweets
18 Feb
عدنان خاشقجی کا عروج وزوال

اس عرب پتی تاجر کا نام عدنان خاشقجی تھا یہ عرب نژاد ترکی تھا،اس کی پیدائش مکہ مکرمہ میں ہوئی تھی ان کا والد شاہی طبیب تھا،یہ شخص ترکی میں قتل ہوئے صحافی جمال خاشقجی کا چچا تھا،2017 میں ان کا انتقال 82 سال کی عمر میں ہوا.ستر اور اسی کی دہائی میں اس کی Image
شہرت اور دولت کا اتنا چرچا تھا کہ شہزادیاں اور شہزادے ان کے ساتھ ایک کپ کافی پینا اپنے لئے اعزاز سمجھتے تھے.
وہ کینیا میں موجود اپنے وسیع و عریض فارم ہاوس میں چھٹیاں گزار رہے تھے ان کی کم سن بیٹی نے آئیسکریم اور چاکلیٹ کی خواہش کی انہوں نے اپنا ایک جہاز ال 747 بمع
عملہ پیرس بھیجا جہاں سے آئیسکریم خریدنے کے بعد جنیوا سے چاکلیٹ لیکر اسی دن جہاز واپس کینیا پہنچا.
اس کے ایک دن کا خرچہ 1 ملین ڈالرز تھا.
لندن،پیرس،نیویارک،سڈنی سمیت دنیا کے 12 مہنگے ترین شہروں میں اس کے لگژری محلات تھے.
انہیں عربی نسل گھوڑوں کا شوق تھا دنیا
Read 13 tweets
17 Feb
ماں نے ڈرتے ڈرتے عالیہ کی طرف دیکھا اور بولی: بیٹی یہ اتنا سارا پھل تو کہاں سے لائی ہے؟ ابھی تو تنخواہ ملنے میں بہت دن باقی ہیں؟ ماں کی آنکھوں میں کرب تھا۔ دماغ میں جو ممکنہ "سچ" گھوم رہا ہے اسے سننے سے ڈر رہی تھی، حالانکہ اسے پتہ تھا عالیہ اس سے کبھی جھوٹ نہیں بولتی۔ Image
وہ بولی: امی جی آپ پریشان نہ ہوں۔ آپکو پتہ ہے میں نہ آپ کو رسوا کروں گی نہ شرمسار ہونے دونگی،
آج جب ہم ٹرمینل پر واپس پہنچے اور میں مسافروں کو رخصت کر رہی تھی تو ایک صاحب نے بس سے اترتے ہوئے میرے ہاتھ میں ہزار روپے کا نوٹ تھما دیا اور بولے بیٹا !!! یہ تمہاری عیدی ہے۔
امی جی میری آنکھیں بھیگ گئیں۔ مجھے ابو بہت یاد آئے۔ مجھے یاد ہے ابو ہمارے لئے موسم کے پھل لایا کرتے تھے۔ میں نے بھی فیصلہ کیا آج گھر پھل لے کر جاؤں گی۔
امی پتہ ہے پھل خریدتے ہوئے میں کیا سوچ رہی تھی۔ روزانہ بس میں کئی لوگ مجھے گندی نگاہوں سے دیکھتے ہوئے اور شیطانی مسکراہٹ
Read 5 tweets
17 Feb
پاگل ٹیکسی ڈرائیور
وہ ایک خستہ حال بیہوش عورت کو لیکر ہسپتال کی ایمرجنسی وارڈ میں داخل ہوا۔ جسکے ساتھ دو نو عمر بچے تھے۔ شکل و شباہت سے بھکاری لگ رہے تھے۔ ڈاکٹر نے مریضہ کو دیکھا اور بولا اس بی بی کو ہارٹ اٹیک ہوا ہے۔ اگر فوری امداد نہ دی گئی تو یہ مر جائیگی۔ Image
فوری علاج کیلئے خاصی رقم کی ضرورت ہے" سنتے ہی بچوں نے چیخنا شروع کر دیا۔ وہ شخص کبھی ڈاکٹر کو دیکھتا، کبھی مریضہ کو اور کبھی بچوں کو۔ کیا لگتی ہیں یہ آپ کی؟ ڈاکٹر نے اس شخص کو تذبذب میں دیکھتے ہوئے پوچھا۔ کچھ نہیں۔ میں ٹیکسی چلاتا ہوں۔ اسے سڑک پہ لیٹے دیکھا،
اسکے پاس بیٹھے یہ دونوں بچے رو رہے تھے۔ میں ہمدردی میں یہاں لے آیا ہوں۔ میری جیب جو ہے، دے دیتا ہوں. اس نے جیب سے جمع پونجی نکال کر میز پر رکھ دی ۔ ڈاکٹر نے پیسوں کیطرف دیکھا اور مسکراتے ہوئے بولا۔
بابا جی ! یہ بہت تھوڑے پیسے ہیں۔
ڈھیر سارے پیسے چاہئیں۔۔۔ وہ بے بسی
Read 10 tweets
17 Feb
شاہراہ قراقرم
شاہراہ قراقرم آپ کو ایک بہت خوبصورت اور دنیا کا ایک عجوبہ نظر آئے گی لیکن اس کی تعمیر ایک بہت بڑا چیلنج تھا اور کم و بیش 900 مزدور اس تعمیر کے دوران ہلاک ہوئے تھے۔ اس عظیم الشان سڑک کی تعمیر کا آغاز 1966 میں ہوا اور تکمیل 1978 میں ہوئی۔
شاہراہ قراقرم کی لمبائی 1,300 Image
کلومیٹر ہے جسکا 887 کلو میٹر حصہ پاکستان میں ہے اور 413 کلومیٹر چین میں ہے۔ یہ شاہراہ پاکستان میں حسن ابدال سے شروع ہوتی ہے اور ہری پور ہزارہ, ایبٹ آباد, مانسہرہ, بشام, داسو, چلاس, جگلوٹ, گلگت, ہنزہ نگر, سست اور خنجراب پاس سے ہوتی ہوئی چائنہ میں کاشغر کے مقام تک جاتی ہے۔
اس سڑک کی تعمیر نے دنیا کو حیران کر دیا ۔۔۔کیونکہ ایک عرصے تک دنیا کی بڑی بڑی کمپنیاں یہ کام کرنے سے عاجز رہیں۔
ایک یورپ کی مشہور کمپنی نے تو فضائی سروے کے بعد اس کی تعمیر کو ناممکن قرار دے دیا تھا۔ موسموں کی شدت, شدید برف باری اور لینڈ سلائڈنگ جیسے خطرات کے باوجود
Read 20 tweets
16 Feb
کامیابی کا راز ۔۔۔

میں نے پچھلے دنوں ایک شخص کا انٹرویو سنا انٹرویو دینے والا دنیا کی کسی بڑی یونیورسٹی یا کالج تو دور کی بات شاید مڈل سکول تک بھی نہ گیا ہو گا
مگر کامیابی کا وہ راز بتا دیا کہ شاید ہی کوئی ڈگری والا کسی کو بتا پائے
وہ شخص ایک بکریاں پالنے والا چھوٹا سا فارمر ہے
اس سے پوچھا گیا کہ آپ کے پاس کتنی بکریاں ہیں اور سالانہ کتنا کما لیتے ہو
اس نے کہا میرے پاس اچھی نسل کی بارہ بکریاں ہیں اور جو مجھے سالانہ چھ لاکھ روپے دیتی ہیں جو ماہانہ پچاس ہزار بنتا ہے
مگر کیمرہ مین نے جب بکریوں کا ریوڑ دیکھا تو اس میں تیرہ بکریاں تھیں
اب اس نے تیرہویں بکری کے بارے میں پوچھا کہ یہ آپ نے کنتی میں شامل کیوں نہیں کی ؟
تو بکری پال کا جواب جو تھا وہ کمال کا تھا اور وہی جملہ دراصل کامیابی کا راز تھا
اس نے کہا کہ بارا بکریوں سے میں چھ لاکھ منافع حاصل کرتا ہوں اور اس تیرہویں بکری کے دو بچے
Read 5 tweets
16 Feb
زلزلے سے پہلے گونج کیوں سنائی دیتی ہے۔۔۔؟
زمین کے اندر جب زلزلہ پیدا ہوتا ہے تو اس سے تین قسم کی لہریں پیدا ہوتی ہیں۔ ان میں سے دو زمین کے اندر سفر کرتی ہیں اور اپنی طاقت اور پھیلاو کے اعتبار سے تباہی کا سبب بنتی ہیں۔ جبکہ ان میں سے ایک لہر جسے ماہر ارضیات پرائمری لہر یا
پی ویئو )P wave) کا نام دیتے ہیںں، وہ باقی دونوں لہروں سے زیادہ تیزی سے سفر کرتی ہوئی زمین کی سطح تک پہنچتی ہے اور سطح کے ساتھ ہموار انداز میں تیزی سے سفر کرتی ہے۔ اس دوران وہ راستے میں آنے والی ہوا اور دیگر چیزوں سے ٹکرا کر تھر تھراہٹ پیدا کرتی ہے، جو عام آدمی
کو گونج کی شکل میں سنائی دیتی ہے۔ اس کے فورا بعد باقی دونوں لہریں بھی سطح تک پہنچتی ہیں اور وہ باقایدہ زمین کو حرکت دینے لگتی ہیں، جسے عام الفاظ میں زلزلہ کہا جاتا ہے۔۔۔ زلزلے کی شدت کا تعلق ان لہروں کی طاقت سے ہوتا ہے۔ جتنی گہرائی سے زلزلہ پیدا ہوگا، سطح پر
Read 4 tweets
15 Feb
تیزی سے سیکھنے والے تیز رفتار نیورون کے مالک ہوتے ہیں جس رفتار سے کوئی بھی شخص معلومات حاصل کرتا، سمجھتا اور پروسیس کرکے اسے جمع کرنے کے بعد استعمال کرتا ہے تو اس کا انحصار دماغی اعصابی خلیات (نیورون) کی فائرنگ پر ہوتا ہے۔ یعنی دماغ سے ایک نیورون کے بعد
دوسرے نیورون کے خارج ہونے میں وقفہ جتنا کم ہوگا اسی رفتار سے دماغ میں معلومات وصول، محفوظ، پروسیس اور اسے استعمال کرنے کا عمل تیز ہوگا۔ بآلفاظ دیگر فوری اور بروقت سوچنے کے عمل میں نیورون فائر ہونے کا وقت بہت اہمیت رکھتا ہے۔

یہ اہم تحقیق یادداشت اور حافظے کے عمل
کو سمجھنے میں نہایت اہم تصور کی جارہی ہے۔ نیورون یعنی دماغی خلیات طبعی طور پر جن تاروں سے جڑے ہوتے ہیں انہیں سائناپسِس کہا جاتا ہے اور اسی کی بدولت آپس میں معلومات کا تبادلہ کرتے ہیں۔ ماہرین نے سمجھنے اور سیکھنے کے ایک اہم دماغی مکینزم ’اسپائک ٹائمنگ
Read 5 tweets
15 Feb
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے چہرہ مبارک کی ایک جھلک

١: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا چہر ہ سب لوگوں سے زیادہ خوبصورت تھا۔ ( صحیح بخاری: ٣٥٤٩، صحیح مسلم٩٣/٢٣٣٧ و دار السلام : ٦٠٦٠)

٢: آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا چہرہ چاند جیسا (خوبصورت اور پر نور )
تھا۔
( صحیح بخاری : ٣٥٥٢)

٣: جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم خوش ہوتے تو آپ کا چہرہ ایسے چمک اٹھتا گویا کہ چاند کا ایک ٹکڑا ہے ۔
( صحیح بخاری: ٣٥٥٦ ، صحیح مسلم: ٢٧٦٩،دار السلام : ٧٠١٦)

٤: آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے چہرے کی ( خوبصورت) دھاریاں بھی چمکتی تھیں۔
( صحیح بخاری: ٣٥٥٥، صحیح مسلم: ١٤٥٩، دار السلام : ٣٦١٧)

٥: نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا چہر ہ سورج اور چاند کی طرح (خوبصورت،ہلکا سا) گول تھا۔ ( صحیح مسلم :١٠٩/٢٣٤٤ ، دار السلام : ٦٠٨٤)

٦: آپ صلی اللہ علیہ وسلم گورے رنگ ، پر ملاحت چہرے ،
Read 8 tweets
14 Feb
ایمزون کا جنگل دنیا کے 9 ممالک تک پھیلا ہوا ہے، جس میں سرفہرست برازیل ہے۔
اس کا کل رقبہ 55 لاکھ مربع کلومیٹر پر محیط ہے، جبکہ پاکستان کا رقبہ 7 لاکھ 95 ہزار مربع کلومیٹر ہے.
یہ جنگل ساڑھے پانچ کروڑ سال پرانا ہے
ایمزون ایک یونانی لفظ ہے جسکا مطلب لڑاکو عورت ہے
زمین کی 20 فیصد آکسیجن صرف ایمزون کے درخت اور پودے پیدا کرتے ہیں
دنیا کے 40 فیصد جانور ، چرند، پرند، حشرات الارض ایمزون میں پائے جاتے ہیں
یہاں 400 سے زائد جنگلی قبائل آباد ہیں، انکی آبادی کا تخمینہ 45 لاکھ کے قریب بتایا گیا ہے۔ یہ لوگ اکیسیوں صدی میں
بھی جنگلی سٹائل میں زندگی گذاررہے ہیں
اسکے کچھ علاقے اتنے گھنے ہیں کہ وہاں سورج کی روشنی نہیں پہنچ سکتی اور دن میں بھی رات کا سماں ہوتا ہے
یہاں ایسے زیریلے حشرات الارض بھی پائے جاتے ہیں کہ اگر کسی انسان کو کاٹ لیں تو وہ چند سیکنڈ میں مرجائے
ایمزون کا دریا
Read 5 tweets
14 Feb
دیوار چین کو تعمیر کرنے میں 17 سو سال کا طویل عرصہ لگا ہے؟ بعض کتابوں میں یہ 2 ہزار سال بھی بتایا گیا ہے۔دراصل اس دیوار کی تعمیر منگول حملہ آوروں سے بچنے کے لیے کی گئی جس کا آغاز 206 قبل مسیح میں کیا گیا۔ اس کے بعد بے شمار بادشاہوں نے حکومت کی اور چلے گئے Image
لیکن اس دیوار کی تعمیر کا کام جاری رہا۔اس دوران دنیا وقت کو ایک نئے پیمانے (حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی آمد کا بعد کا وقت۔ بعد از مسیح) سے ناپنے لگی، سنہ 1368 شروع ہوا اور چین میں منگ خانوادے کی حکومت کا آغاز ہوا۔لیکن دیوار چین کی تعمیر ابھی بھی جاری تھی۔
آخر اس کے لگ بھگ ڈھائی سو سال بعد اسی خانوادے کے ایک بادشاہ کے دور میں دیوار کی تعمیر مکمل ہوئی۔ یہ 1644 کا سال تھا۔موجودہ دیوار کا 90 فیصد حصہ اسی خاندان کے دور میں تعمیر ہوا۔دیوار چین کی تعمیر کے دوران اینٹوں کو جوڑنے کے لیے چاول کا آٹا استعمال کیا گیا تھا۔
Read 8 tweets